ہیروشیما کی تباہی کو 67 سال گزر گئے

ہیروشیما کی تباہی کو 67 سال گزر گئے

ٹوکیو (مانیٹرنگ ڈیسک)دوسری جنگ عظیم کے دوران جاپان کے شہر ہیرو شیما پر ڈھائی گئی قیامت کو آج 67 برس مکمل ہو گئے یہ بم امریکہ نے گرائے جنہوں نے پل بھر میں پورے شہر کو صفحہ ہستی سے مٹا دیا۔6 اگست 1945 کی صبح آٹھ بج کر سولہ منٹ پرہیروشیماکے شہریوں پر "لٹل بوائے" نامی جو قیامت ڈھائی گئی اس نے پلک جھپکتے ہی ایک لاکھ ساٹھ ہزار لوگوں کو ابدی نیند سلا دیاکیونکہ ایٹم بم گرنے کے بعد سیکنڈ کے ہزارویںحصے میں درجہ حرارت ایک لاکھ ڈگری سینٹی گریڈ تک جاپہنچا تھا جس نے ہر شے کو پگھلا کر رکھ دیا اور شہر پل بھر میں ملیا میٹ ہو گیا۔ ٹھیک دو دن بعد 9 اگست کو ناگا ساکی پر بھی اسی نوعیت کا ایٹم بم گرایا گیا جس نے جاپان کو گھٹنوں کے بل گرنے پر مجبور کر دیا۔اس طرح یوں جاپان کی شکست پر دوسری جنگ عظیم کا خاتمہ ہوا۔امریکہ اور اس کے حواری جنگ تو جیت گئے لیکن اس میںنقصان صرف معصوم جاپانیوں کا ہوا جو آج تک ایٹم بم کے برے اثرات سے نہیں نکل سکے۔

مزید : صفحہ آخر