آزادی مارچ سے سٹاک مارکیٹ پر منفی اثرات مرتب ہونگے: آفتاب چوہدری

آزادی مارچ سے سٹاک مارکیٹ پر منفی اثرات مرتب ہونگے: آفتاب چوہدری

  

لاہور(کامرس رپورٹر)لاہور سٹاک ایکسچینج کے مینجنگ ڈائریکٹراور چیف ایگزیکٹو آفیسر آفتاب احمد چودھری نے کہا ہے کہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ سٹاک مارکیٹ کا انڈیکس 30ہزار پوائنٹس کو عبور کیا ہے لیکن 14اگست کے موقع پر آزادی مارچ کے اعلان سے سٹاک مارکیٹ پر منفی اثرات مرتب ہو سکتے ہیں اور غیر ملکی سرمایہ کار اپنی سرمایہ کاری سٹاک مارکیٹ سے نکال کر لے جا سکتے ہیں لہٰذا اپوزیشن سمیت سیاسی جماعتوں کو چاہئے کہ وہ یوم آزادی کے موقع پر آزادی مارچ کی بجائے ملکی یکجہتی اور یگانگت کا مظاہرہ کریں ۔اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے لاہور سٹاک ایکسچینج کے ایم ڈی نے کہا کہ دس سال بعد موڈیز انٹرنیشنل نے پاکستان کے معاشی اشارے مثبت قرار دیئے ہیں جن کے باعث کراچی سٹاک مارکیٹ کا انڈیکس 30ہزار پوائنٹس کی تاریخی حد کو عبورکر گیا۔سٹاک مارکیٹ میں غیر ملکی سرمایہ کاری میں اضافہ ہوا ۔انہوں نے کہا کہ اگر موجودہ حکومت برسر اقتدار اوراس کی معاشی پالیسیاں جاری رہتی ہیں تو سٹاک مارکیٹ مزید مستحکم ہو گی اور بیرونی سرمایہ کاری بڑھے گی۔لاہور سٹاک ایکسچینج کے سابق چیئرمین سید عاصم ظفر نے کہا کہ بدقسمتی سے جب بھی پاکستان اپنے پاﺅں پر کھڑا ہونے لگتا ہے اور معیشت درست سمت گامزن ہوتی ہے ملک کو سازشوں اور احتجاجی دھرنوں سے نقصان پہنچانے کی کوشش کی جاتی ہے ۔موجودہ حکومت کی معاشی پالیسیوں اور عالمی مالیاتی اداروں کی جانب سے پاکستان کی معیشت کو بہتر قرار دینے کی وجہ سے کراچی سٹاک مارکیٹ میں 6ارب ڈالر کی بیرونی سرمایہ کاری ہوئی ہے اگر خدانخواستہ آزادی مارچ اور اسلام آباد دھرنے سے حالات خراب ہو گئے اور ملک میں انارکی پھیل گئی تو سٹاک مارکیٹ کریش ہو سکتی ہے جس سے ملکی معیشت بحران کا شکار ہو جائے گی ۔اس وقت سٹاک مارکیٹ میں فارن فنڈز حصص کی خریداری کر رہے ہیں جبکہ میوچل فنڈز حصص کی فروخت کر رہے ہیں لیکن جب فارن فنڈز نے حصص کی فروخت شروع کر دی تو سٹاک مارکیٹ کے لئے سنبھلنا مشکل ہو جائے گا ۔

انہوں نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ عالمی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسی موڈیز انٹرنیشنل نے پاکستان کی کریڈٹ ریٹنگ اس شرط کے ساتھ مثبت قرار دی تھی کہ اگر پاکستان میں سیاسی استحکام قائم رہے گا اور جمہوری حکومت چلے گی اگر حالات خراب ہو جاتے ہیں توملک عدم استحکامکا شکار ہو جاتا ہے تو موڈیز انٹرنیشنل دوبارہ پاکستان کی کریڈٹ ریٹنگ مثبت سے منفی کر سکتا ہے جس سے ملکی معیشت اور سٹاک مارکیٹ پر انتہائی برے اثرات پڑیں گے ۔سید عاصم ظفر نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ یوم آزادی کا موقع احتجاجی مارچ کا نہیں بلکہ قوم سے اظہار یکجہتی کا ہے ۔ہمارے سیاستدانوں کو چاہئے کہ وہ ملکی مسائل سڑکوں پر دھرنے دینے کی بجائے پارلیمنٹ کے ذریعے حل کرائیں۔

مزید :

کامرس -