استعفے اور نئے انتخابات سے مسائل بڑھیں گے، صنعتکارو کاروباری تنظیمیں

استعفے اور نئے انتخابات سے مسائل بڑھیں گے، صنعتکارو کاروباری تنظیمیں

  


لاہور(رپورٹنگ ٹیم)مختلف صنعتکاروں اور کاروباری تنظیموں کے رہنماؤں نے ’’پاکستان‘‘ کے مقبول عام سلسلے ’’ایشو آف دی ڈے‘‘ میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ یہ وزیر اعظم نوازشریف کے استعفے اور نئے انتخابات کا وقت نہیں ، اگر وہ مستعفی ہو بھی جائیں تو ملک کے موجود مسائل حل نہیں ہونگے بلکہ بڑھیں گے، اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر سہیل لاشاری نے کہا کہ ملک اس وقت کسی آزادی یا انقلاب مارچ کا متحمل نہیں ہو سکتا،فوج شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف آپریشن میں مصروف ہے اور اپوزیشن جماعتیں یوم آزادی کے موقع پر اسلام آباد دھرنے دے رہی ہیں جس سے ملکی حالات خراب ہوں گے ۔افراتفری پھیلے گی اور صنعتی و تجارتی سرگرمیاں متاثر ہوں گی۔ پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشن فرنٹ(پیاف) کے چیئرمین طاہر جاوید ملک کہا کہ کاروباری برادری ملک میں انتشار اور افرا تفری پیدا کرنے والے عناصر کی کاروائیوں کے خلاف متحدہ و مشترکہ آواز بلند کرے،پاک فوج ملک میں دھشت گردوں اور ان کے ٹھکانوں کا صفایا کرنے میں مصروف ہے ، اپنے مشن کی تکمیل میں بہادر سپوت جام شہادت نوش کر رہے ہیں لیکن دوسری طرف بعض سیاسی اور غیر سیاسی شخصیات کی طرف سے جمہوریت کے نام سے اسلام آباد میں فساد پیدا کرنے کا پروگرام بنا رہی ہیں۔ فریقین کوملک کا نظام تباہ کرنے اور عوام کی پریشانیوں میں اضافہ کرنے والے فیصلوں اور اقدامات سے اجتناب کریں ۔ فیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامرس کے ریجنل چیئرمین ایس ایم نصیراور پی پی اے کے سابق چیئرمین عبدالباسط نے کہا کہ وطن عزیز کی آزادی کیلئے ہمارے بزرگوں نے بڑی قربانیاں دیں لیکن ہماری بد قسمتی ہے کہ 14اگست کو آزادی منانے کی بجائے ہم احتجاج کر رہے ہیں اس سے عالمی دنیا کو پاکستان کے بارے میں نہایت غلط تاثر ملے ۔اپاکستان تحریک انصاف اور پاکستان عوامی تحریک کو چاہئے کہ وہ آزادی مارچ یا انقلاب مارچ کی بجائے اپنے مسائل پارلیمنٹ کے اندر حل کریں ۔لاہور ٹاؤن شپ انڈسٹریل ایسوسی ایشن کے چیئرمین ظہیر بھٹہ، مسلم لیگ ٹریڈرز ونگ کے سینئر نائب صدر خواجہ خاور رشید اور دیگر نے کہا کہ عالمی ادارے معاشی استحکام کے اشارے دے رہے ہیں ،بے سمت احتجاج کر کے ملک کی ابھرتی ہوئی معیشت کو جامد نہ کیاجائے ۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک سال کے عرصہ میں معاشی اشاریوں میں استحکام آیا ہے جب کہ اداروں کے کارکردگی میں اضافہ ہوا ہے ۔ ڈالر کی قیمت میں قابل قدر کمی کے باعث ملکی معیشت مضبوط ہو ئی ہے۔ حکومت دہشت گردی کو کنٹرول کرنے میں بھی کامیاب رہی ہے۔ اگر حکومت کو پر امن انداز میں کام کر نے دیا جائے تو کو ئی وجہ نہیں ہے کہ ملکی مسائل پر قابوپالیا جائے۔

مزید :

صفحہ اول -