1400 رضا کاروں کی تنخواہیں اور الاؤنس تھانیدار ہڑپ کر گئے متاثرین کا الزام

1400 رضا کاروں کی تنخواہیں اور الاؤنس تھانیدار ہڑپ کر گئے متاثرین کا الزام

  

لاہور(کرائم سیل) صوبائی دارالحکومت میں کام کرنے والے چودہ سو سے زائد رضاکاروں کی تنخواہیں اور الاؤنس ایس ایچ او لے اڑے ،عید دیہاڑی لگاکر یا ادھار مانگ کر گزاری ،رضاکاروں کا موقف۔تفصیلات کے مطابق کسی بھی ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لئے حکومتی ہدایات پرپولیس کی جانب سے نوجوانوں پر مشتمل رضاکار فورس فوری بھرتی کر لی جاتی ہے جن کا معاوضہ صوبائی حکومت اپنے بجٹ میں سے ادا کرتی ہے۔ اس بار بھی ملکی حالات کی خرابی اور بد امنی سے نمٹنے کے لئے حکومت نے لاہور بھر سے سیکیورٹی کے امور کی انجام دہی کے لئے آٹھ ماہ قبل چودہ سو رضاکاروں کو بھرتی کرنے کا فیصلہ کیا ،ان رضاکاروں کو دس ہزار ماہانہ وظیفہ یا معاوضہ دیا جانا بھی طے شدہ تھا۔ بھرتی کئے جانے والے رضاکاروں کو پولیس ناکوں ،دوران گشت موبائل گاڑیوں کے ساتھ ،سرچ آپریشن کے دوران علاقہ کے گردونواح کا کنٹرول سنبھالنا تھا جس میں سے اکثر کام توحکومت کی جانب سے لئے ہی نہیں گئے صرف ان رضاکاروں کو مساجد کے باہر ،ناکوں پر کھڑا کرکے ان کی ڈیوٹی موٹر سائیکل سوار حضرات کی تلاشیاں لینے ،موٹر سائیکلوں کے کاغذات چیک کرنے تک ہی محدود کر دی گئی اور ان کے لئے ملنے والا تمام وظیفہ تھانوں میں تعینات ایس ایچ اوزہڑپ کر گئے جس کا ذکر اکثر رضاکار کرتے نظر آتے ہیں۔ موٹر سائیکلوں کی چوری روکنے کے لئے پہلے پہل گشت بھی کروایا جاتا تھا مگر اب ایسا نہیں کیا جاتا ۔متاثرین نے بتایا کہ ایک سال قبل الیکشنوں کے دوران بھی رضاکاروں کی بھرتی کی گئی مگر ان کو بجٹ کم ہونے کیوجہ سے فارغ کر دیا گیا، ملک میں ہونے والے بم دھماکوں کے بعد ہمیں دوبارہ رکھ لیا گیا ہے مگر وعدوں کے باوجود بھی کوئی معاوضہ ادا نہیں کیا جارہا ۔جب کبھی کسی افسر کو ایس ایچ او کی شکایت کرنے کی کوشش کی گئی تو انہوں نے ہمیں کام سے ہی فارغ کر دیا اب ہمارے پاس اور تو کوئی روز گار ہے نہیں جس سے ہم لوگ گزر بسر کر سکیں لہذا یہی کام کر کے اپنے گھروں میں راشن لے جاتے ہیں ۔

مزید :

علاقائی -