ایم کیو ایم نے کارکنوں کی رہائی کیلئے بھارت سمیت55ممالک کو خط لکھ دیا

ایم کیو ایم نے کارکنوں کی رہائی کیلئے بھارت سمیت55ممالک کو خط لکھ دیا

کراچی(اے این این) متحدہ قومی موومنٹ کی جانب سے کارکنان کی گرفتاری پر بھارت سے مداخلت کے لئے لکھا گیا خط منظر عام پر آگیا،رابطہ کمیٹی نے بھارتی ہائی کمشنر کو لکھے گئے خط میں کارکنان کی گرفتاری اور گمشدگی کا نوٹس لینے کی درخواست کی تھی جبکہ ایم کیو ایم رابطہ کمٹی نے موقف اختیار کیا ہے کہ خط صرف بھارتی ہائی کمشنر کو نہیں دنیا کے مختلف ممالک کے سفراء کو لکھا گیا تھا،صرف بھارت کو سامنے لانا ابدنیتی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق ایم کیو ایم کا کراچی میں کارکنوں کی گرفتاری پر بھارتی ہائی کمیشن کو لکھا گیا خط سامنے آ گیا جس میں کارکنوں کی گمشدگی اور گرفتاری کا نوٹس لینے کی درخواست کی گئی تھی۔ ایم کیو ایم نے 29 جولائی کو گرفتار کیے گئے 4 کارکنوں کی بازیابی پر خطوط لکھے ہیں، خط میں ذکر گیا ہے کہ متحدہ قومی موومنٹ کے 4کارکنوں ولید کمال، شایان رحمان، سعد ہاشمی اور اسد رضا کی گرفتاری کا ذکر کیا گیا ہے، جنہیں شادی میں شرکت کیلئے کراچی سے حیدرآباد جاتے ہوئے گرفتار کیا گیا۔دوسری جانب ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی کے ترجمان شبیر قائم خانی نے کہا ہے کہ کراچی میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزی کے حوالے سے صرف بھارت نہیں بلکہ کئی ممالک کے سفارتخانوں کو خط لکھنا معمول کی کارروائی ہے۔ شبیر قائم خانی کے مطابق بھارت سمیت تمام سفارتخانوں کو لکھے جانے والے خط کی کاپیاں وزیر اعظم پاکستان ، چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف آف آرمی سٹاف کو بھیجی جاتی ہیں۔ایم کیو ایم کوئی کام چھپ کر نہیں کرتی ، ان کا کہنا ہے کہ ایم کیو ایم نے اسی حوالے سے اقوام متحدہ ، یورپی یونین اور ایمنسٹی انٹرنیشنل کو بھی خطوط ارسال کیے ہیں۔دنیا بھر کے مختلف ممالک کے سفارتخانوں کو خط لکھنا معمول کی کاروائی ہے۔شبیر قائم خانی نے کہا ہے کہ ایم کیو ایم کی جانب سے امریکا،برطانیہ، چین، جاپان، آسٹریلیا اورعرب ریاستوں سمیت دنیا کے 55 ممالک کو خطوط لکھے گئے،صرف بھارت کو لکھا گیا خط سامنے لانا بدنیتی پر مبنی اقدام ہے۔شبیر قائم خانی کا کہنا ہے کہخط میں تمام ممالک کے سفیروں سے معاملے کا نوٹس لینے، آواز بلند کرنے کی اپیل کی گئی ہے اور یہ ایم کیو ایم کا حق ہے کہ وہ اپنی آواز دنیا بھر میں بلند کرے، بھارت کراچی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا نوٹس لے۔

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)ایم کیو ایم کے رہنما فاروق ستارنے کہا ہے کہ بھارت کو خط ’’ٹیکنیکل ایرر‘‘ہو سکتا ہے لیکن یہ دانستہ غلطی نہیں،سفارتخانوں کے ایڈریس میں بھارت کا ای میل بھی ہو گا لہذا غلطی سے خط بھارتی ہائی کمیشن کو چلا گیا ہو گا۔ قومی اسمبلی کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فاروق ستار نے کہا ہے کہ بھارتی سفارتخانے کو بھیجا گیا خط کوئی غلطی ہو سکتی ہے،دانستہ ایسا کوئی اقدام نہیں اٹھایا گیا۔ دوسری جانب ایم کیو ایم کے رہنما وسیم اختر نے نجی ٹی وی چینل ایکسپریس نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کو خط لکھنا معمول کی کارروائی ہے لیکن بھارت کومدد کے لئے کوئی خط نہیں لکھا گیا۔انہوں نے کہا کہ ہمارے پارلیمننٹرین تمام سفارتکاروں کو خط لکھتے ہیں،بھارت کو خط کوئی سیکرٹ دستاویزات نہیں ، خط امریکہ ، کینیڈا ، سعودی عرب سمیت متعدد ممالک کو لکھا گیا۔وسیم اختر نے مزید کہا کہ وزیر اعظم نواز شریف آم کی پیٹیاں بھارت بھجوا سکتے ہیں ، نریندرمودی سے بار بار مل سکتے ہیں ،نواز شریف بھارت میں کاروباربھی کرتے ہیں ہم نے خط لکھا دیا تو کیا ہو گیا۔

مزید : صفحہ اول