مسلم لیگ ن کا پی پی رہنمائوں کے رابطوں اور مطالبات کو منظر عام پر لانے کا فیصلہ

مسلم لیگ ن کا پی پی رہنمائوں کے رابطوں اور مطالبات کو منظر عام پر لانے کا ...
مسلم لیگ ن کا پی پی رہنمائوں کے رابطوں اور مطالبات کو منظر عام پر لانے کا فیصلہ

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک) مسلم لیگ (ن) کے عقاب صفت رہنمائوں نے پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت کے ”پس پردہ رابطوں“ اور مطالبات کو ”منظر عام“ پر لانے کا اصولی فیصلہ کرلیا ہے۔

روزنامہ نوائے وقت کے مطابق مسلم لیگ کی اعلی قیادت نے عقاب صفت رہنمائوں کے دبائو کے باعث پیپلز پارٹی کے ”مطالبات“ تسلیم کرنے سے انکار کردیا ہے۔وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ اور سینیٹ میں قائد حزب اختلاف اعتزاز احسن کے درمیان ”لڑائی“ کا پس منظر یہ ہے کہ چودھری نثار علی خان کرپشن کے مقدمات میں ملوث پی پی رہنماں کو کوئی رعایت دینے کے لئے تیار نہیں۔ انہوں نے پارٹی کی اعلی قیادت کو باور کرا دیا ہے کہ پیپلز پارٹی سے کسی خیر کی توقع نہیں رکھنی چاہئے۔ذرائع کے مطابق پیپلز پارٹی کے بعض رہنمائوں کے مسلم لیگ (ن) کی اعلی قیادت سے خفیہ رابطے قائم ہیں اور وہ حکومت سے رعائتوں کا تقاضا کر رہے ہیں۔

اخبار کے مطابق پیپلز پارٹی کی اعلی قیادت ایک طرف اسٹیبلشمنٹ سے ہر قیمت پر معاملہ کرنا چاہتی ہے دوسری طرف مسلم لیگی کی اعلی قیادت کا ساتھ دینے کی قیمت وصول کرنا چاہتی ہے۔ اخبار کے مطابق وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان کے نکتہ نظر کو مسلم لیگ (ن) کے رہنمائوں راجہ محمد ظفر الحق‘ خواجہ سعد رفیق‘ مشاہد اللہ خان اور احسن اقبال کو میاں شہبازشریف کی تائید حاصل ہے۔مسلم لیگ ن کے عقاب صفت رہنمائوں اور پیپلز پارٹی کے رہنماuwں کے درمیان آئندہ چند دنوں میں شدید نوعیت کی ”لڑائی“ کا امکان ہے۔ چودھری نثار علی خان جو پچھلے دو سال سے پیپلز پارٹی کے رہنمائوں کے بارے میں کوئی بات کرنے سے مصلحتاً گریز کرتے رہے ہیں۔آئندہ چند دنوں میں کھل کر اپنے دل کی بات کہیں گے۔ انہوں نے اپنی سیاسی زندگی میں صرف ایک بار وزیراعظم محمد نوازشریف کی طرف سے روکنے پر چودھری اعتزاز احسن کی تقریر کا جواب نہیں دیا تھا اب وہ کسی کی پروا کئے بغیر کھل کر چودھری اعتزاز احسن کو جواب دینا چاہتے ہیں۔

مزید :

اسلام آباد -