خواجہ آصف ، رانا ثناء اللہ کی کامیابی کے نوٹیفکیشن جاری کرنے سے روکدیا گیا

خواجہ آصف ، رانا ثناء اللہ کی کامیابی کے نوٹیفکیشن جاری کرنے سے روکدیا گیا

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس مامون رشید شیخ نے الیکشن کمشن کوحلقہ این اے 106فیصل آباد سے مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثناء اللہ اور این اے 73سیالکوٹ سے خواجہ آصف کی کامیابی کا نوٹیفکیشن جاری کرنے سے روک دیا ہے ۔فاضل جج نے ان کے مدمقابل امیدوار ڈاکٹر نثار احمد کی درخواست پر رانا ثناء اللہ کو آج7اگست کے لئے نوٹس بھی جاری کردیئے ہیں۔علاوہ ازیں لاہور ہائی کورٹ میں حلقہ این اے 89،این اے 114، این اے 73،پی پی 41اور پی پی 151میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے لئے درخواستیں دائر کردی گئی ہیں۔رانا ثناء اللہ کے خلاف دائر درخواست کی ابتدائی سماعت جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے کی اور بعد میں اسے سماعت کے لئے جسٹس مامون رشید شیخ کو بھیج دیا گیا کہ وہ اس نوعیت کی درخواستوں کی پہلے بھی سماعت کرچکے ہیں۔درخواست گزار پی ٹی آئی کے اس حلقہ سے امیدوارڈاکٹر نثار احمد کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ رانا ثناء اللہ نے قادیانیوں کے بارے متنازعہ بیان دیا ،رانا ثناء اللہ نے میاں محمدنواز شریف کے استقبال کرنے کو حج کرنے کے مترادف بھی قرار دیا،وہ قومی اسمبلی کی رکنیت کے اہل نہیں ہیں،آئین کے آرٹیکل 62 کے تحت انہیں نااہل قراردیا جائے ،درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ این اے 106سے رانا ثناء اللہ کو دھاندلی سے کامیاب قرار دیا گیا ، درخواست میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی استدعا بھی کی گئی ہے۔لاہور ہائیکورٹ نے پی پی 41 اور این اے 89 میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے لئے دائردرخواستوں کی سماعت سے جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے معذرت کرتے ہوئے فائلیں جسٹس مامون رشید کو بھجوا دی ہیں،پی پی 41 سے مسلم لیگ (ن) کے ناکام امیدوار سید وقار الحسن کی درخواست دائر کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ریٹرنگ افسر نے پولنگ ایجنٹس کے ساتھ نامناسب رویہ رکھا اور انہیں فارم 45 نہیں دیا گیا،درخواست گزار کے مطابق اس حلقہ سے تحریک انصاف کے امیدوار احمد نواز کو دھاندلی کے ذریعے چند سو ووٹوں سے جتوا دیا گیا،ریٹرنگ افسر نے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد کر دی،ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا حکم جاری کیا جائے۔حلقہ این اے 89 میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے لئے ناکام امیدوار اسامہ احمد میلہ نے درخواست دائر کی ہے،ان کا موقف ہے کہ سابق وزیر محسن علی رانجھا کو دھاندلی سے جتوا دیا گیا جبکہ سیکڑ وں ووٹ مسترد کر دیئے گئے،ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا حکم جاری کیا جائے۔حلقہ این اے 114 جھنگ میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے لئے سید فیصل صالح حیات نے درخواست دائر کی ہے ،ان کا موقف ہے کہ ان کے مدمقابل تحریک انصاف کے امیدوار محبوب سلطان کو589ووٹوں کی برتری سے کامیاب قراردیا گیا ، مسترد شدہ وٹوں کی دوبارہ گنتی کے بعد فیصل صالح حیات کے حق میں208 ووٹوں کا اضافہ ہوا، ریٹرنگ افسر نے 10 پولنگ سٹیشنز کی دوبارہ گنتی کروائی تو محبوب سلطان کی لیڈ 538 ووٹوں کی رہ گئی، این اے 114 سے مسترد شدہ وٹوں کی تعداد 12 ہزرا 970 تھی،ریٹرنگ افسر کو پورے حلقے کے پولنگ سٹیشنز کی دوبارہ گنتی کی درخواست دی جو مسترد کردی گئی،درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ مکمل ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا حکم جاری کیا جائے۔دریں اثناء تحریک انصاف کے میاں اسلم اقبال کی کامیابی کو بھی لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کردیا گیاہے،اس سلسلے میں پی پی 151 لاہورسے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار باقر حسین نے درخواست دائر کی ہے جس میں الیکشن کمشن، ریٹرنگ افسر اور میاں اسلم اقبال کو فریق بنایا گیا ہے،درخواست گزار کا موقف ہے کہ ان کے پولنگ ایجنٹس کو فارم 45 فراہم نہیں کیا گیا،پریذائیڈنگ افسر نے دانستہ طور پر مسترد ہونے والے ووٹ مخالف امیدوار کے کھاتے میں ڈال دیئے جبکہ مخالف امیدوار کے سپوٹرز نے پولنگ سٹیشنز کے اندر سرعام اپنے امیدوار کو وٹ ڈلوائے، ریٹرنگ افسر کو دھاندلی کی درخواست دی لیکن کوئی کارروائی نہیں کی گئی، درخواست میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کروانے کی استدعا کی گئی ہے ۔درخواست میں میاں اسلم اقبال کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کی استدعا بھی کی گئی ہے ۔عدالت عالیہ میں حلقہ این اے 73 سیالکوٹ سے خواجہ آصف کی کامیابی کو بھی چیلنج کردیا گیا ہے ،اس سلسلے میں تحریک انصاف کے راہنما عثمان ڈار نے درخواست دائر کی ہے جس میں الیکشن کمیشن، ریٹرننگ افسر اور خواجہ آصف کو فریق بنایا گیا ہے،درخواست گزار کا موقف ہے کہ انہوں نے این اے 73 سیالکوٹ سے الیکشن میں حصہ لیا اور دوسرے نمبر پر رہے،ریٹرننگ افسر نے ان کے پولنگ ایجنٹس کو فارم 45 فراہم نہیں کئے،درخواست گزار کے مطابق حلقہ این اے 73 سے 7ہزار 346 ووٹ مسترد ہوئے، خواجہ آصف نے صرف 1406 ووٹ زیادہ حاصل کئے ،ریٹرننگ افسر کو حلقے کی دوبارہ گنتی کی درخواست دی جسے مسترد کردیا گیا،درخواست میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا حکم جاری کرنے کی استدعا کی گئی ہے ۔درخواست میں یہ استدعا بھی کی گئی ہے کہ ووٹوں کی دوبارہ گنتی تک خواجہ آصف کی کامیابی کانوٹیفکیشن روکا جائے۔عداالت عالیہ نے عثمان ڈار کی درخواست پر خواجہ آصف آج 7اگست کیلئے نوٹس جاری کرتے ہوئے انکی کامیابی کا نوٹیفکیشن جاری کرنے سے روک دیا۔

رانا ثناء اللہ

مزید : صفحہ آخر