عدالت نے بڑا حکم دے دیا، آزادی کی خوشیاں مناتے راؤ انوار کو زوردار جھٹکا لگ گیا

عدالت نے بڑا حکم دے دیا، آزادی کی خوشیاں مناتے راؤ انوار کو زوردار جھٹکا لگ ...
عدالت نے بڑا حکم دے دیا، آزادی کی خوشیاں مناتے راؤ انوار کو زوردار جھٹکا لگ گیا

  

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) سندھ ہائی کورٹ نے آزادی کی خوشیاں مناتے راؤ انوار کو ایک زور دار جھٹکا دیتے ہوئے اس کے خلاف دائر نقیب اللہ کے قتل کا مقدمہ کسی دوسری عدالت میں منتقل کرنے کا حکم دے دیا ہے۔

ایکسپریس ٹربیون کے مطابق مقتول نقیب اللہ کی والدہ نے سندھ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی جس میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ جس انسداد دہشت گردی عدالت میں اس وقت مقدمہ زیرسماعت ہے وہاں شفاف سماعت نہیں ہو رہی چنانچہ اسے کسی اور عدالت میں منتقل کیا جائے۔ اس درخواست کی سماعت سندھ ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے کی اور فیصلے سناتے ہوئے مقدمہ کسی دوسری عدالت میں منتقل کرنے کا حکم دے دیا۔

رپورٹ کے مطابق ہائی کورٹ نے درخواست نمٹاتے ہوئے اس حوالے سے دفتر داخلہ، پراسیکیوٹر جنرل، سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار اور دیگر فریقین کو نوٹس بھی جاری کر دیئے اور ان سے 20اگست کو جواب طلب کر لیا ہے۔نقیب اللہ کی والدہ کے وکیل فیصل صدیقی کا کہنا تھا کہ ’’ہمیں اس انسداد دہشت گردی عدالت پر اعتبار نہیں تھا اور ہم چاہتے تھے کہ مقدمہ کسی اور عدالت میں منتقل کر دیا جائے۔ اس عدالت میں راؤ انوار کو ملزم ہی نہیں سمجھا جا رہا تھا۔ ہائی کورٹ نے ہمارے موقف کو درست سمجھا اور مقدمے کو کسی اور عدالت میں منتقل کرنے کا حکم دے دیا ہے۔‘‘

مزید : جرم و انصاف /علاقائی /سندھ /کراچی