سرکاری ہسپتالوں میں آپریشن شروع، ادویات، آلات ختم، غریبوں کا داخلہ بند 

    سرکاری ہسپتالوں میں آپریشن شروع، ادویات، آلات ختم، غریبوں کا داخلہ بند 

  

لاہور(جاوید اقبال) کورونا کے باعث لگنے والے لاک ڈاؤن کے اختتام کے بعد صوبہ بھر کے سرکاری ٹیچنگ اور ضلعی ہسپتال آباد ہو گئے ہیں جبکہ دوسری طرف ہسپتالوں میں غریب مریضوں کا مفت علاج معالجہ تقریباً ختم ہو گیا ہے۔ زیادہ تر ہسپتالوں میں ادویات اور سرجیکل ڈسپوزیبل ساز و سامان نا پید ہو گیا ہے۔یہاں تک کے بعض بڑے ہسپتالوں کے ایمرجنسی وارڈوں میں بھی جہاں حکومت کی طرف سے 24گھنٹے علاج معالجہ اور ادویات مفت فراہم کرنے کا نوٹیفیکیشن موجود ہے کے بر عکس ہسپتالوں کی انتظامیہ مریضوں کو بازار سے مہنگی ترین ادویات خرید کر لانے پر مجبور کر رہی ہے۔بتایا گیا ہے کہ ہسپتالوں میں مریضوں کا رش اپنے معمول پر آگیا ہے اورآپریشن بھی شروع ہو گئے ہیں مگر مریضوں کو ساز و سامان بازار سے خریدنا پڑ رہا ہے۔ بعض ہسپتالوں کی انتظامیہ نے بورڈ آف مینجمنٹ کی منظوری کے بغیر ہی کلینیکل پتھالوجی اور ریڈیالوجی کے ٹیسٹوں کی مد میں بھی غیر معمولی اضافہ کر دیا ہے۔ ایم آر آئی،سٹی سکین،الائزہ اور پی سی آر جیسے ٹیسٹوں کی مفت سہولت بھی بند کر دی گئی ہے جس سے مریض مفت علاج معالجہ کے لئے دن بھر ہسپتالوں میں مارے مارے پھرتے ہیں۔اس حوالے سے مشیر صحت حنیف پتافی سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ ایسی کوئی بات نہیں ہے حکومت کی طرف سے ٖغریب مریضوں کا علاج معالجہ مفت کرنے کی واضح ہدایات ہیں۔جس ہسپتال میں خلاف ورزی پکڑی گئی اس کی انتظامیہ کے خلاف ایکشن لیں گے۔ایمرجنسی میں تو کسی صورت کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔  

سرکاری ہسپتال

مزید :

صفحہ اول -