قبائلی نوجوان پر فائرنگ کا نوٹس،ملزمان کیخلاف مقدمہ درج

قبائلی نوجوان پر فائرنگ کا نوٹس،ملزمان کیخلاف مقدمہ درج

  

ٹانک(نمائندہ خصوصی)ریجنل پولیس آفیسر آیبٹ اباد نے قبائلی نوجوان پر فائرنگ کا نوٹس لیکر ملزمان کے خلاف ایف آئی ار درج کردی، تاہم ایف آئی ار درج کرنے  میں آٹھ دن کی تاخیری حربے استعمال کرنے والے تھانہ میرپور عملے کے خلاف کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی جاسکی، تفصیلات کے مطابق جنوبی وزیرستان سے تعلق رکھنے والے ساجد اقبال پر آیبٹ اباد کے علاقہ لمبی ڈھیری میں جرائم پیشہ عناصر کی جانب سے فائرنگ پر ریجنل پولیس آفیسر ہزارہ ڈویژن نے نوٹس لیکر ملزمان کے خلاف  دفعہ 506/34 اور دفعہ ppc 337/ A1 کے تحت  ایف آئی ار درج کردی گئی ہے، تاہم ایف آئی ار درج کرنے میں آٹھ دن تک تاخیری حربے استعمال کرنے والے تھانہ میرپور کے عملے کے خلاف تاحال کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی ہے، جنوبی وزیرستان سے تعلق رکھنے والے قبائلی رہنما ملک اے ڈی محسود نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے آئی جی پولیس اور ریجنل پولیس آفیسر ہزارہ ڈویژن سے مطالبہ کیا کہ محکمہ پولیس سے کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی کرنا وقت کی ضرورت ہے، ان کا کہنا تھا کہ ہزارہ ڈویژن میں مقامی پولیس افسران اور ان کا ماتحت عملہ اقرباء پروری اور قومی تعصب پر مبنی کاروائیوں سے غیر مقامی لوگوں کیلئے انصاف فراہم کرنے میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے، ان کا کہنا تھا کہ مقامی پولیس آفیسر اور دیگر اہلکاروں کی تبادلے دور دراز علاقوں میں کی جائیں تاکہ عوام کو انصاف کے حصول میں حائل رکاوٹوں کا خاتمہ ہوسکے، ان کا کہنا تھا کہ تھانہ میرپور  کے عملے کا ایف آئی ار درج کرنے میں تاخیری حربے استعمال کرنے اور مخالف فریق کے ساتھ راضی نامہ کرنے کیلئے دباو ڈالنے پر تھانہ حکام کے خلاف فوری طور پر کاروائی عمل میں لائی جائے تاکہ محکمہ پولیس میں پرانی رویش کا خاتمہ ہوکر محکمہ پولیس کو جدید خطوط پر استوار کرکے عوامی خدمت کو اپنا شعار بنایا جاسکے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -