شاہ محمود قریشی کا سعودی عرب کے خلاف بیان،لندن میں بیٹھے اسحاق ڈار بھی میدان میں آگئے،ایسی بات کہہ دی کہ عمران خان بھی طیش میں آجائیں گے

شاہ محمود قریشی کا سعودی عرب کے خلاف بیان،لندن میں بیٹھے اسحاق ڈار بھی میدان ...
شاہ محمود قریشی کا سعودی عرب کے خلاف بیان،لندن میں بیٹھے اسحاق ڈار بھی میدان میں آگئے،ایسی بات کہہ دی کہ عمران خان بھی طیش میں آجائیں گے

  

لندن( ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنما اور سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی جانب سے برادر ہمسایہ ملک سعودی عرب کے خلاف بیان کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ تحریک انصاف کی  حکومت کو چاہیے کہ وہ میاں نواز شریف سے سیکھیں کہ کامیاب سفارتکاری کیسے کی جاتی ہے؟شاہ محمود قریشی کا الیکٹرانک میڈیا پر سعودیہ کے حوالے سے بیان انتہائی تشویش ناک، حیران کن، غیر ذمہ دارانہ اور قابل مذمت ہے۔

تفصیلات کے مطابق مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ پر اپنے ویڈیو پیغام میں اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی  کا الیکٹرانک میڈیا پر سعودیہ کے حوالے سے بیان انتہائی تشویشناک، حیران کن، غیر ذمہ دارانہ اور قابل مذمت ہے،سعودی عرب پاکستان کا دیرینہ دوست ہے،چاہے وہ ایٹمی دھماکے ہوں یا کسی عالمی فورم پر پاکستان کو سپورٹ چاہے ہو تو سعودی عرب پاکستان سے دوستی کا ثبوت دیتے ہوئے ہمیشہ پیش پیش رہا ہے،اس بیان کی وجہ اور محرکات  کیا تھے معلوم نہیں  ؟۔انہوں نے کہا کہ ایک چیز بڑی واضح ہے کہ ہماری خارجہ ٌپالیسی مکمل ناکام ہو چکی ہے ،جیسے ملک کی معاشی پالیسی کی تباہی ساری قوم دیکھ چکی ہے،اگر ہم ماضی میں دیکھیں تو آپ کو یاد ہو گا کہ جب یمن کا معاملہ تھا اور قومی اسمبلی نے ایک قرارداد پاس کرنی تھی،سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کی سربراہی میں ایک کمیٹی ریزولیشن کی ڈرافٹنگ کو  فائنلائزکر رہی تھی ،مسلم لیگ ن کی طرف سے میں اور میرے ساتھی اس کمیٹی میں شامل تھے ،پیپلز پارٹی کا اپنا وفد تھا جبکہ تحریک انصاف کی جانب سے شاہ محمود قریشی  اپنے ساتھیوں کے ساتھ عمران نیازی  کی ترجمانی کر رہے تھے جو آج تمام کبینٹ میں موجود ہیں ،ہم نے ان کو ڈپلومیسی نانز کےحوالےسےکنونس کرنے کی کوشش کی ،ریزولویشن کی تمام ورڈنگ کافی افہام تفہیم اور بحث کے بعد فائنلائز ہو ئی لیکن یہ بضد رہے۔

اسحاق ڈار نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت کو چاہیے کہ وہ میاں نواز شریف سے سیکھیں کہ کامیاب سفارتکاری کیسے کی جاتی ہے؟ جب بین الاقوامی طاقتیں بھارت کو نیوکلئیر سپلائرز گروپ کا ممبر بنانے کے دہانے پر تھیں تو  یاد کریں کہ کیسے مسلم لیگ ن کی حکومت نے بہترین اور کامیاب ڈپلومیسی کرکے اس اقدام کو روکا، ہم  نے اپنے دوستوں کو کنونس کیا کہ اگر آپ نے انڈیا کو ممبر بنانا ہے تو پہلے پاکستان کو بھی  نیوکلئیر سپلائرز گروپ کا ممبر  بنانا پڑے گا ۔انہوں نے کہا کہ شاہ محمود قریشی نے سعودی عرب کے حوالے سے ٹیلی وژن پر بیٹھ کر جو کچھ کیا ہے وہ قابل مذمت ہے،ہزاروں ایسی چیزیں جو ہمارے سینے میں ہیں ڈپلومیٹک ورلڈ کے حوالے سے لیکن  ہم نے کبھی ٹیلی وژن اور پبلک میں آکر اس کا کریڈٹ لینے کی کوشش نہیں کی ،وزارت خارجہ میں پورا ریکارڈ موجود ہے کہ اس وقت ایڈوائزر فارن افیئرز کو کہاں بھیجا گیا اور کہاں ملاقاتیں ہوئیں؟زرا غور کیجیے تاکہ آپ کو پتا چلے کہ ڈپلومیسی کس چیز کا نام ہے اور اس کو کسیے ہینڈل کرنا چاہے؟۔

مزید :

برطانیہ -