بجلی بحران کا مستقل حل تلاش کیا جائے، ناصر حمید خان 

بجلی بحران کا مستقل حل تلاش کیا جائے، ناصر حمید خان 

  

لاہور(سٹی رپورٹر)بجلی بحران کا مستقل حل تلاش کیا جائے، پاور سیکٹر کے لیے طویل المدت پالیسی اپنائی جائے۔ لائن لاسز پر قابو پایا جائے،ان خیالات کا اظہار ممبر وفاقی چیمبر، سابق سینئر وائس چئیرمین پیاف، سابق سینئر نائب صدر لاہور چیمبر ناصر حمید خان نے تاجروں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ،سولر پینلز کی مقامی پیداوار بڑھانے کے لیے مراعاتی پیکیج دینا ہو گا تاکہ امپورٹ بل کم ہو۔۔ ہمارا ملک قدرتی وسائل سے مالا مال ہے، بہترین بہاو کے ساتھ دریا موجود ہیں۔ ہماری پاور جنریشن کی صلاحیت تیس ہزار میگا واٹ سے زائد ہے، جسے بڑھا کر پچاس ہزار سے زائد کیا جاسکتا ہے۔قابل تجدید توانائی وسائل کو بھی استعمال میں لانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملکی بجلی کی پیداوار میں دس فیصد شیئر سولر، نیوکلیئر، ونڈانرجی کا ہے جسے بتدریج بڑھانے کی ضرورت ہے۔

 ہمارے ہاں موسم گرما طویل ہوتا ہے۔ ہمیں سولر انرجی اور نیٹ میٹرنگ کی طرف جانا ہو گا۔اس کے ساتھ ساتھ ہمیں اپنا لائف سٹائل بھی بدلنا ہو گا اور بجلی کے استعمال میں بچت کرنا ہو گی۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں توانائی بحران کی اصل وجہ مکس فیول ٹرانسفارمیشن  ہے۔  پاکستان میں بجلی کی کل پیداوار کا ساٹھ فیصد شیئر تھرمل کاہے، جس کے لیے ڈیزل اور فرنس آئل امپورٹ کرنا پڑتا ہے۔تیس فیصد شیئر ہائیڈل کا ہے جس کے لئے طویل المدت پالیسی کی ضرورت ہوتی ہے تاہم ہم نے دیکھا ہے کہ عوامی پریشر پر حکومتیں شار ٹ کٹ اختیار کرتی ہیں۔ 

مزید :

کامرس -