بحرین،بادشاہ کی تصویر پھاڑنے پر خاتون کو3 سال قید

بحرین،بادشاہ کی تصویر پھاڑنے پر خاتون کو3 سال قید

 مناما(اے این این)جمہوریت نواز کارکن زینب الخواجہ کوبادشاہ کی تصویرپھارنے پر 3سال قید کی سزا سنادی گئی ۔ غیرملکی خبررساں ایجنسی کے مطابق بحرین کی ایک عدالت نے انھیں اپنی سزا کے خلاف اپیل کرنے سے پہلے قید سے جرمانہ ادا کر کے جیل سے باہر رہنے کی موقع دیا ہے۔زینب کا تعلق بحرین کے سب سے حکمران مخالف خاندان سے ہے اور ان کے مقدموں کی سماعت اگلے ہفتے شروع ہونی والی ہے۔ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مشرقِ وسطی اور شمالی افریقہ کے نائب ڈائریکٹر سعید بومیدوہا نے کہا کہ کسی ریاست کے سربراہ کی تصویر پھاڑنا ایک جرم نہیں ہونا چاہیے ایمنسٹی انٹرنیشنل اس مقدمے سمیت زینب کے خلاف تمام مقدموں کو ختم کرنے کی درخواست کرتا ہے۔واضح رہے کہ زینب الخواجہ کو، جو بحرینی اور ڈینش شہری ہیں، سنہ 2011 میں ہونے والے جمہوریت نواز مظاہروں کے بعد سے کئی بار گرفتار کیا گیا ہے۔زینب نے مبینہ طور پر اعلی عدالتوں سے اپیل کرنے سے انکار کر دیا تھا کیونکہ وہ سمجھتی تھیں کہ بحرین کی عدلیہ بھی حکومت کے کنٹرول میں ہے۔ انھوں نے اپنی ضمانت دینے سے بھی انکار کر دیا تھا۔زینب کے والد عبدالہادی خواجہ سنہ 2011 میں ہونے والے حکومت مخالف مظاہروں میں حصہ لینے کی وجہ سے عمر قید کی سزا کاٹ رہے ہیں۔

مزید : عالمی منظر