اغوا ء اورقتل کے مقدمہ میں ملوث مجرم کو سزائے موت

اغوا ء اورقتل کے مقدمہ میں ملوث مجرم کو سزائے موت

  

لاہور(نامہ نگار)ایڈیشنل سیشن جج سیف اللہ سوہل نے وکیل کو اغوا ء کے بعدقتل کرکے نعش گندے نالے میں پھینکے کے مقدمہ میں ملوث مجرم مرید عباس کو سزائے موت جبکہ گھر سے سامان چوری کرنے الزامات پر 24سال قید اور ایک لاکھ روپے جرمانے کی سزا کا حکم سنا دیا ہے ،فاضل جج نے مقدمہ میں شریک خاتون سمیت 2ملزمان کو بری کردیا۔عدالت میں تھانہ گلبرگ پولیس نے 3ملزمان مریدعباس، غلام عباس اور صدف ہمیش کے خلاف فاروق زمان ایڈووکیٹ کو اغوا ء کرکے قتل کرنے اور گھر سے سامان چوری کرنے کے الزام میں چالان پیش کررکھا تھا،ملزمان کے خلاف مقدمہ مقتول کے بیٹے فیصل زمان نے مقدمہ درج کرایاتھا۔ عدالت میں چالان آنے پر باقاعدگی سے سماعت ہوئی ،عدالت نے گزشتہ روز وکلاء وفریقین کے دلائل سننے کے بعد جرم ثابت ہونے پر ایک مجرم مریدعباس کو سزائے موت سمیت دیگر مذکورہ بالا سزائیں سنا ئی ہیں جبکہ مقدمہ میں شریک دو ملزمان صدف ہمیش اور غلام عباس کو شک کا فائدہ دے کر بری کردیاہے ۔

ملزم مرید حسین پر الزام تھا کہ اس نے صدف اور غلام عباس کے ساتھ مل کر مقتول فاروق زمان ایڈووکیٹ کو اس کی کوٹھی سے ان کی کار میں اغوا کیا بعد میں انہوں نے اسے قتل کرکے اس کی نعش کو گندے نالے میں پھینک دی جس کو بعد میں ملزم مرید عباس کی نشان دہی پر برآمدکیا گیا،مذکورہ ملزمان کے خلاف پولیس نے 2012ء میں مقدمہ درج کیا تھا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -