الطاف غداری کیس ، کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے ،ہائی کورٹ

الطاف غداری کیس ، کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے ،ہائی کورٹ
الطاف غداری کیس ، کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے ،ہائی کورٹ

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے پاکستان مخالف بیان دینے پر الطاف حسین کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے کی درخواستوں میں سیکرٹری داخلہ کا جواب غیرتسلی بخش قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا، عدالت نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ ایسی کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے جو پاکستان کے خلاف ہیں۔جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں فل بنچ الطاف حسین کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے کی درخواستوں پر سماعت شروع کی تو وفاقی سیکرٹری داخلہ عارف خان نے عدالت میں ابتدائی جواب داخل کراتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ پاکستان مخالف بیان دینے پر الطاف حسین کے خلاف سندھ میں مقدمات درج کئے گئے ہیں، ایم کیو ایم فاروق ستار کے نام پر رجسٹرڈ ہے، الطاف حسین کے نام کچھ نہیں، بطور سیکرٹری میرا کام پالیسی بنانا ہے، الطاف کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے کی حتمی منظوری وزیر داخلہ دینگے، وزیر داخلہ چودھری نثار بیمار ہیں، اس لئے ان سے بات نہیں ہو سکی، فل بنچ نے سیکرٹری داخلہ کا جواب غیرتسلی بخش قرار دیکر مسترد کردیا اور حکم دیا ہے کہ غداری کا مقدمہ درج کرنے کے حوالے سے وفاقی حکومت واضح اور بامعنی جواب داخل کرائے، ایسی کالی بھیڑوں کیخلاف کارروائی کی جانی چاہیے جو پاکستان کیخلاف ہیں، عدالت آپکے جواب سے مطمئن نہیں، آپکو وزیر داخلہ سے بات کرنی چاہیے تھی، وفاقی حکومت کے وکیل نے کہا کہ حکومت گڈگورننس پر یقین رکھتی ہے، عدالتی حکم پر عمل کرینگے جس پر جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی نے ریمارکس دیئے کہ ملک میں گڈگورننس نام کی کوئی چیز نہیں ہے، عوام کو ایک وقت کی روٹی ملتی ہے، باقی دو وقت کا کھانا نہیں ملتا، ہسپتالوں میں مریضوں کا کوئی پرسان حال نہیں، وفاقی حکومت کے وکیل نے استدعا کی کہ تھوڑی مہلت دیدیں، جلد تفصیلی جواب لے آئیں گے جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ جواب نہیں آتا تو کسی شہزادے کا خط ہی لے آئیں، خیال رکھیں کہ وہ خط قطری شہزادے کا نہ ہو، قطری شہزادے کے خط سے متعلق ریمارکس پر عدالتی کارروائی کشت زعفران بن گئی، عدالت نے مزید سماعت دو ہفتوں تک ملتوی کرتے ہوئے سیکرٹری داخلہ کو غداری کے مقدمے سے متعلق جواب داخل کرانے کی مہلت دے دی ۔

مزید :

لاہور -