توانائی کے حصول کیلئے متبادل سستے ذرائع پر قومی کانفرنس کا انعقاد

توانائی کے حصول کیلئے متبادل سستے ذرائع پر قومی کانفرنس کا انعقاد

لاہور(پ ر)سابق وفاقی وزیر پانی و بجلی وسابق چئیرمین واپڈا انجینئر طارق حمید کا کہنا ہے کہ مہنگی بجلی ملک کا اصل مسئلہ ہے اسی لئے معیشت چل نہیں پارہی ،فوری متبادل سستے انرجی ذرائع پر منتقل ہونا ہو گا آج پانی و بجلی کمی میں ہم صومالیہ اور ایتھوپیا سے بھی آگے چلے گئے ہیں جس کے ہم سب ذمہ دار ہیں۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے انسٹی ٹیوشن آف انجنیئرز پاکستان کے زیر اہتمام قومی کانفرنس متبادل سستے انرجی ذرائع میں خطاب کرتے ہوئے کیا ، چیف لسیکو مجاہدپرویز چٹھہ ،صدر آئی ای پی ڈاکٹر اظہار الحق ،وی سی یو ای ٹی انجنیئر فضل احمد ،جنرل سیکرٹڑی آئی ای پی انجنیئر میاں سلطان محمود ،چیئرمین آئی ای پی ڈاکٹر اشرف شیخ ،ڈین یو ای ٹی نوید رمضان نے بھی خطاب کیا ،،سابق وفاقی وزیر طارق حمید کا کہنا تھا کہ بجلی کی قلت شدید مسئلہ رہی ہے گزشتہ کئی دہائیوں سے قابو پانے کے لئے ٹھوس کام نہ ہوا اور سستی بجلی کے ذرائع سولر ونڈ اور بایؤ گیس کی طرف نہ جانے سے درآمد شدہ تیل والی بجلی مہنگی ترین ملنے سے معاشی طور پر تباہ ہو گئے ہیں ، آئی ای پی جنرل سیکرٹری میاں سلطان محمود کا کہنا ہے کہ انجنیئرز کو بیرون ملک ملنے والے فنڈذ اور ٹیکنالوجی سے محروم کر دیا گیا۔ڈاکٹر اشرف شیخ کا کہنا ہے کہ سولر ونڈ پر منتقل ہوئے بغیر سستی بجلی ممکن نہیں بڑے ڈیم نہ بنانا قومی جرم ہے ۔چیف لسیکو مجاہد پرویز چٹھہ کا کہنا ہے کہ سرکلر ڈیٹ بڑھنے کی بڑی وجہ بجلی مہنگی ہونے کے باوجود بروقت حکومت کی طرف سے ٹیرف مںں اضافہ نہ ہونا ہے۔

،،سستی بجلی کے بغیر لائن لاسز کم ہوں گے اور نہ ہی عوام کو معاشی سرگرمیوں میں تیزی ممکن ہو سکے گی انجنیئرز کو اپنا کردار ادا کرنے میں حکومت اور نجی سیکٹر کو آگے آنا ہو گا

مزید : کامرس