بلڈنگز میں غیر معیاری وائرنگ کرنیوالے الیکٹریشنوں کیخلاف گھیرا تنگ ‘ مقدمات کا فیصلہ

بلڈنگز میں غیر معیاری وائرنگ کرنیوالے الیکٹریشنوں کیخلاف گھیرا تنگ ‘ ...

ملتان ( سٹاف رپورٹر) پرائیویٹ الیکٹریشنوں کی شامت آگئی ۔ وزارت توانائی پنجاب نے بغیر لائسنس وائرنگ کرنے والے پرائیویٹ الیکٹریشنوں پر مقدمات درج کرانے کے کے احکامات جاری کر دئیے۔ کرنٹ اور آگ لگنے کے حادثات سے بچاؤ کے لئے نئے بجلی کنکشنوں سے قبل (بقیہ نمبر39صفحہ12پر )

گھروں‘ کارخانوں ‘ٹیوب ویلوں‘ فیکٹریوں سمیت تمام عمارتوں میں معیاری وائرنگ کی سخت چیکنگ کا حکم دے دیا ۔ وزارت توانائی کے نوٹس میں یہ بات آئی ہے کہ پرائیویٹ الیکٹریشن بغیر لائسنس گھروں سمیت عمارتوں میں غیر معیاری وائرنگ کررہے ہیں جس سے کرنٹ‘ شارٹ سرکٹ اور آگ لگنے کے حادثات ہو رہے ہیں۔وزارت توانائی پنجاب کی طرف سے صوبے بھر کے ریجنل الیکٹرک انسپکٹرز کو حکم دیا گیا ہے کہ بجلی کے گھریلو‘ کمرشل ‘ زرعی ‘ انڈسٹریل سمیت تمام کیٹگریز کے نئے کنکشنوں کے اجرا سے قبل وہاں معیاری وائرنگ کو یقینی بنایاجائے ۔وائرنگ صرف گورنمنٹ کے منظور شدہ کنٹریکٹرز /الیکٹریشنز سے ہی کرائی جائے جو ارتھنگ اور انسولیشن ‘ سرکٹ بریکرز سمیت تمام حفاظتی اقدامات کو یقینی بنائیں تاکہ کرنٹ لگنے سے انسانی جانوں کا نقصان نہ ہوسکے اور نہ ہی شارٹ سرکٹ سے آگ لگنے سے مالی نقصان کا اندیشہ رہے ۔اس سے واپڈا کے ٹرانسفارمرز بھی نقصان کا احتمال نہیں رہتا ۔اس بارے میں رابطہ کرنے پر ریجنل الیکٹرک انسپکٹر ملتان محمد طارق نے بتایا کہ تمام کیٹگریز کے صارفین کنکشن سے قبل گورنمنٹ کنٹریکٹر/الیکٹریشن سے معیاری وائرنگ کرانے کے پابند ہیں اور مذکورہ کنٹریکٹر/الیکٹریشن ارتھنگ اور انسولیشن کے ذمہ دار ہوں گے اور ٹیسٹ رپورٹ جاری کریں گے ۔الیکٹریسٹی ایکٹ 1910سے چلا آرہا ہے ۔ا س کے بعد واپڈا کے افسران بھی چیکنگ کے بعد ٹیسٹ رپورٹ کی تصدیق کریں گے تب ہی کنکشن جاری ہو سکے گا ۔ انہوں نے متنبہ کیا کہ بغیر لائسنس وائرنگ کرنے والوں کی نشاندہی کی جائے ۔ ان کے خلاف فوجداری مقدمات درج کرائے جائیں گے ۔ہم حادثہ ہونے کے بعد جو پکڑ دھکڑ کرتے ہیں ‘ اگر پہلے ہی معاملات ٹھیک کرلیں تو حادثے کی نوبت ہی نہیں آئے گی ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر