رستم، نجی تعلیمی اداروں میں مفت تعلیم کا متعارف کر دہ سکیم سست روی کا شکار

رستم، نجی تعلیمی اداروں میں مفت تعلیم کا متعارف کر دہ سکیم سست روی کا شکار

رستم(تحصیل رپورٹر)ضلعی حکومت کی جانب سے غریب اور نادار بچوں کے لئے نجی تعلیمی اداروں میں مفت تعلیم کا متعارف کر دہ سکیم سست روی کا شکار ہوچکا ہے، سکیم کے تحت وہ والدین جو اپنے بچوں کو غربت کی وجہ سے سکول میں داخل نہیں کرا سکتے اور انکے اخراجات نہیں اٹھا سکتے وہ سرکاری خرچہ پر اپنے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں میں داخل کر کے انہیں تعلیم کے زیور سے آراستہ کرا سکتے تھے، سکیم کے تحت پچھلے سال کی طرح امسال بھی مارچ 2018کو گھر گھر سروے کیا گیا اور بچوں کو ووچر جاری کئے گئے اور والدین نے بخوشی اپنے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں میں داخل کیا لیکن بدقسمتی سے ان والدین اور سکول انتظامیہ کو لینے کے دینے پڑ گئے مارچ سے لیکر نومبر2018 تک پرائیویٹ سکولوں کو سکیم کے تحت ضلعی دفتر سے کوئی فنڈز ریلیز نہیں ہو ا جس کی وجہ سے سکول مالکان اپنی جیب سے بچوں کے یونیفارم، جوتے، بیگز، کتابیں ، نوٹ بکس وغیرہ فراہم کررہے ہیں جو ان کے لئے مزید برداشت کرنا ناممکن ہوچکا ہے، اس سلسلے میں جب مردان آفس رابطہ کیا گیا تو پہلے تو دفتر والوں نے کہا کہ ہمیں ابھی تک رواں سال کا فنڈنگ نہیں ہوا ہے جس کی وجہ سے ہم نے سکولوں کو ابھی تک فنڈز ریلیز نہیں کیا بعد میں انہوں نے بتایا کہ جن سکولوں کے خیبر بنک میں اکاؤنٹ ہیں ہم ان کو فنڈز ریلیز کررہے ہیں باقی جن سکولوں کے خیبر بنک میں اکاؤنٹ نہیں ہیں ان کو فنڈ ریلیز نہیں کیا چکا ہے ، اس سلسلے میں ضلعی حکومت فوری ایکشن لیکر فنڈز کو بغیر کسی وجہ کے سکولوں کو ریلیز نہ کرنے والوں کے خلاف کاروائی کریں۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مزید : پشاورصفحہ آخر