پنجاب کابینہ میں اختلافات پر صوبہ سے گڈگورننس غائب ، ترقیاتی منصوبے کھٹائی کا شکار

پنجاب کابینہ میں اختلافات پر صوبہ سے گڈگورننس غائب ، ترقیاتی منصوبے کھٹائی ...

لاہور(جاوید اقبال)حکومت کے100 دن گزر جانے پرپنجاب میں گڈگورننس کہیں دکھائی نہیں دے رہی،کابینہ ارکان اور افسر شاہی میں تعاون اور اشتراک کا رکے فقدان کے باعث مسائل میں روز بروز اضافہ ہوتا جا رہا ہے ،نئے ترقیاتی منصوبوں کا آغاز تو درکنارماضی میں شروع کئے گئے منصوبہ جات بھی کھٹائی میں پڑتے دکھائی دے رہے ہیں جبکہ اکثر محکموں میں آئے روز افسروں کے تبادلوں اور پھر منسوخی نے رہی سہی کسر پوری کر دی ۔ بتایا گیا ہے کہ صوبائی کابینہ کے بیشتر وزراء کے درمیان اختلافات شدت اختیار کر گئے ، وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدارایوان وزیراعلیٰ سے سینئر وزیر عبدالعلیم خان کا دفتر ختم کرانا چاہتے ہیں جس کے باعث دونوں کے درمیان اعتماد کی فضا تاحال بحال نہیں ہو سکی جبکہ عثمان بزدار صوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان سے بھی نالاں ہیں اوریہی وجہ ہے کے انھوں نے ڈاکٹر شہباز گل کو اپنا ترجمان مقرر کر رکھا ہے ۔دوسری جانب تجاوزات کے خلاف آپریشن کے معاملے پر صوبائی وزراء عبدالعلیم خان اور میاں محمود الرشید میں شدید اختلافات ہیں ۔ذرائع کے مطابق مسلم لیگ (ق )سے تعلق رکھنے والے وزیر قانون راجہ بشارت کے محکمہ کے اکثر کام صوبائی وزیر پراسیکیوشن چوہدری ظہیرالدین کو بھجوا دئیے جاتے ہیں جس سے وزیر قانون بھی ناراض ہیں ۔سپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویز الٰہی اور گورنر پنجاب چودھری سرور میں فاصلے پہلے سے بھی زیادہ گہرے ہوچکے ہیں ۔وزیر بہبود آبادی کرنل (ر) ہاشم ڈوگر کا شکوہ ہے کہ وزیر سوشل ویلفیئر اجمل چیمہ ان کے محکمے میں مداخلت کرتے ہیں۔ وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد اور وزیر اعلی کے درمیان بھی اختلاف بڑھ گئے ،عثمان بزدار محکمہ صحت کیلئے نیاوزیر لانے کے خواہشمند ہیں ، جس کے سبب ڈاکٹر یاسمین راشد ناراض ہیں۔ اس حوالے سے وزیر اعلی پنجاب کے ترجمان ڈاکٹر شہباز گل سے بات کی گئی تو انھوں نے کہا کہ وزیر اعلی عثمان بزدار کی قیادت میں صوبہ ترقی کی منزلیں طے کر نا شروع ہو گیا ہے، لاہو رکی طرح دیگر شہروں میں بھی بے سہارا لوگوں کیلئے پناہ گاہیں بنائیں گے جبکہ صوبے میں امن وامان کی صورتحال بھی بہتر ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ کرپشن کو نہ صرف جڑ سے اکھاڑا جا رہا ہے بلکہ ماضی میں جنہوں نے کرپشن کی ان کو جیلوں میں ڈالا جا رہا ہے ۔شہباز گل نے مزید کہا کہ صوبائی وزرا ء میں اختلافات اس نوعیت کے نہیں جو حکومت کیلئے نقصان دے ہوں۔

پنجاب کابینہ / اختلافات

مزید : صفحہ اول