جلسوں سے کورونا پھیل رہا ہے، اپوزیشن جماعتوں نے استعفے دینے ہیں تو دیدیں: وفاقی وزراء

جلسوں سے کورونا پھیل رہا ہے، اپوزیشن جماعتوں نے استعفے دینے ہیں تو دیدیں: ...

  

 ملتان (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوزایجنسیاں)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ اپوزیشن کا الائنس غیر فطری اور وقتی ہے، یہ پڑا ؤ بچا ؤکیلئے کیا گیا ہے،ان لوگوں نے استعفے دینے ہیں تو دیدیں،پی ڈی ایم کا ملتان میں شو ناکام تھا،میری رائے میں یہ تقریب نہیں ہونی چاہئے تھی،ہمارا موقف ہے یہ عمل انسانی جانوں سے کھیلنے کے متراد ف تھا،کوروناکی دوسری لہربہت خطرناک ہے،ملتان میں کورونامثبت کیسزکی شرح زیادہ ہے،کوروناکی دوسری لہرسے ملتان میں کافی اموات ہوئیں،ملک میں ہیلتھ ایمرجنسی کانفاذ ہے،اپوزیشن دوہرے معیارسے پرہیزکرے،ہم نے سیاسی انداز سے آگے بڑھنا  ہے۔ اتوار کو پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شاہ محمودقریشی نے کہا کہ حال ہی میں ملتان میں پی ڈی ایم کاجلسہ ہوا،میری رائے میں یہ تقریب نہیں ہونی چاہئے تھی،شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میری سوچ کبھی غیر سیاسی اورغیرضروری نہیں رہی،سامنے آکر بتائیں میں نے پکڑ دھکڑیا کسی کی تضحیک کی ہو،لوگ سیاسی ضرورت کے تحت بیان بازی کرتے ہیں،کوئی الزامات لگانا چاہتا ہے تو روک نہیں سکتا۔قبل ازیں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ دہشتگردی کے حوالے سے بھارت پاکستان کے ڈوزئیر کا جواب دنیا کو نہیں دے سکا۔ملتان میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ او آئی سی کی قرارداد میں مشترکہ طور پر ہندوستان کی کشمیر پالیسی مسترد کی گئی جب کہ خود ہندوستان میں بھی کشمیر کی پالیسی پر اتفاق رائے نہیں رہا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ او آئی سی کے 47 ویں اجلاس میں 57 ملکوں نے بابری مسجد کی شہادت کی مذمت کی۔ان کا کہنا تھا کہ آج ہندوستان دفاعی پوزیشن میں چلا گیا ہے، ہندوستان کلبھوشن جادھو کا کیس عالمی عدالت میں لے کر گیا لیکن اسے ناکامی ہوئی۔وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا ہے کہ اپوزیشن جلسے، جلوس کرکے عوام دشمنی کا مظاہرہ کورونا معاملے پر ابہام پیدا کر رہی ہے۔ لیگی رہنما کہتے ہیں کورونا جلسوں سے نہیں پھیلتا۔دنیا نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ لوگ حفاظتی تدابیر پر عمل نہیں کر رہے۔ ایس او پیز کی خلاف ورزی پر ایکشن لیا جا رہا ہے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کی سفارشات پر بڑے اجتماعات پر پابندی لگائی گئی۔ این سی او سی کے مطابق 300 سے زائد افراد کا اجتماع نہیں ہو سکتا۔ تحریک انصاف نے اپنے تمام اجتماعات کو روک دیا ہے۔ سکھر میں پی ٹی آئی تقریب کے دوران گائیڈ لائنز کو فالو کیا گیا تھا۔یک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جلسے کی اجازت نہیں لیکن ہم پی ڈی ایم کو ایسا کرنے سے نہیں روکیں گے تاہم لاہور جلسے کے منتظمین کیخلاف مقدمات درج ہوں گے۔ اسد عمر کا کہنا تھا کہ اپوزیشن لوٹا پیسہ بچانے کیلئے لوگوں کی جانوں سے کھیل رہی ہے۔ ہم سب کو کورونا کے دوران ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔ملک کی معاشی صورتحال پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہر ہفتے مہنگائی میں کمی آ رہی ہے۔ عالمی ادارے پاکستان کی معاشی بہتری کا اعتراف کر رہے ہیں۔ کورونا کی وجہ سے دنیا کی معیشتوں کو نقصان ہوا، تاہم اس کے باوجود پاکستان کی معیشت میں استحکام آ رہا ہے۔ گزشتہ 4 ماہ سے ہماری معیشت تیزی سے ترقی کر رہی ہے۔

 شاہ محمود

اسلام آباد(آئی این پی) وفاقی وزیر برائے اطلاعات ونشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے کہ کورونا کے حوالے سے حالیہ اعداد و شمار تشویشناک  ہیں، سیاسی اجتماعات کورونا پھیلانے کا سبب بن رہے ہیں،پی ڈی ایم کے پشاور اور ملتان جلسوں کے بعد ان شہروں میں کورونا کیسز اور شرح اموات میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے،ان اجتماعات کا انعقاد قانون اور ایس او پیز کی دھجیاں اڑانے کے مترادف ہے۔ اتوار کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک بیان میں سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ اپوزیشن رہنماء خود تو گھر کے پرآسائش ماحول میں قرنطینہ ہیں جبکہ کارکن اورعوام کو ذاتی وسیاسی مفاد کے تحفظ کیلئے ایندھن کے طور پراستعمال کیاجارہا ہے۔ اپوزیشن آخر کب تک معصوم عوام کی جانوں سے یوں ہی کھیلتی رہے گی؟کورونا سے اپنوں کو کھونے والے باشعورعوام انھیں کبھی معاف نہیں کریں گے۔ سینیٹر شبلی فراز نے کہا  کہ مریم صفدر کی بے ربط تقریر جو انہوں نے  لاہور میں کی وہ ان کی ذہنی زبوں حالی کی غمازی کرتی ہے۔ وزیراطلاعات شبلی فراز کا مریم نواز کی تقریر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس خاندان کی دوسری نسل کی ترجمانی کرتی ہیں جنہوں نے ہمیشہ اس ملک کا استحصال کیااور اس کوبری طرح لوٹاان کا ایمان صرف پیسہ ہے اورانہوں نے ہمیشہ پیسے ہی کو عزت دی جس سے زلت اور رسوائی ہمیشہ ان کا مقدر رہی وفاقی وزیرنے کہا کہ عوام پر یہ واضح ہوگیا ہے کہ یہ ان کی ذاتی لڑائی ہے جس کے لیے وہ غریب عوام کو بیوقوف بنا رہے ہیں لیکن ان کے بیانیہ کی اب سیاست میں کوئی جگہ نہیں رہی،ان کے اپنے ہی کنونشن میں گو نواز گو کے نعرے لگے اور گلگت بلتستان کے الیکشن میں بھی ان کی پارٹی کی رسوائی ہوئی، اگر اس خاندان میں زرا بھی عزت نفس ہوتی تو وہ سیاست چھوڑ چکے ہوتے۔ شبلی فراز نے کہا کہ عوام کو آج کوئی شک نہیں رہ گیا کہ مریم صفدر فرسٹریشن اور ڈپریشن کی اس انتہا کو پہنچ چکی ہیں جہاں انہیں کچھ سجائی نہیں دے رہا۔  شبلی فراز نے مزید کہاکہ ملک میں کورونا ایمر جنسی نافذ ہے اور دن بدن ان کیسز میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔ کوئی باضمیر اور عوام کا درد رکھنے والا سیاسی لیڈر سوچ بھی نہیں سکتا کہ عوام نے جس طرح آج کورونا کے خلاف جاری جدو جہد میں بین الاقوامی اداروں، میڈیا اور حکومتی اقدامات کی دھجیاں اڑتی دیکھی ہیں وہ قابل مذمت ہیں اور بین لاقوامی سطح پر جگ ہنسائی کا سبب بن رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جس تیزی سے کورونا پھیل رہا ہے اس سے ہسپتالوں میں بہت دباؤ آگیا ہے اور ہمیں تمام شعبہ جات اور مکتب فکر سے مسلسل دباؤ ہے کہ حکومت کو غریب عوام کی جانیں بچانے کے لیے اس قسم کے عاقبت  نا اندیش سیاست دانوں کے خلاف کارروائی کرنی چاہیے۔

شبلی فراز

مزید :

صفحہ اول -