گوجرانوالہ کو لاہور، سیالکوٹ موٹر وے سے لنک کرنے کااعلان، نئی انڈسٹریل سٹیٹ کے قیام کا بھی جائز ہ لیں گے: پروزی الٰہی 

  گوجرانوالہ کو لاہور، سیالکوٹ موٹر وے سے لنک کرنے کااعلان، نئی انڈسٹریل ...

  

لاہور(جنرل رپورٹر)وزیراعلیٰ پنجاب چودھری  پرویز الٰہی اورسابق وفاقی وزیر مونس الٰہی سے وزیراعلیٰ آفس میں گوجرانوالہ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے وفد نے ملاقات کی۔ایم این اے حسین الٰہی بھی اس موقع پر موجود تھے۔وزیراعلیٰ چودھری پرویزالٰہی نے گوجرانوالہ کو لاہورسیالکوٹ موٹر وے سے لنک کرنے کا اعلان کیااور کہا کہ لاہور سیالکوٹ موٹر وے سے مواصلاتی رابطہ ہونے سے گوجرانوالہ کے شہریوں کو بے پناہ سہولت ملے گی۔صنعتکاروں کو اپنی پروڈکٹس دیگر شہروں تک لے جانے میں آسانی ہوگی۔لاہورسیالکوٹ موٹروے کے ساتھ دیگرشہروں کو بھی لنک کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ لاہورسیالکوٹ موٹر وے کا منصوبہ سابقہ دور میں بنایا۔بدقسمتی سے مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے اس منصوبے کو تبدیل کیا جس سے لاگت میں اضافہ ہوا اورکئی شہرموٹر وے سے لنک نہ ہوسکے۔گوجرانوالہ میرا اپنا شہر ہے،جلد دورہ کرونگا۔انہوں نے کہا کہگوجرانوالہ کے شہریوں کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کریں گے۔گوجرانوالہ کے صنعتکاروں کیلئے نئی انڈسٹریل سٹیٹ کے قیام کا بھی جائزہ لیں گے۔گوجرانوالہ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے وفد نے لاہور سیالکوٹ موٹر وے کے گوجوانوالہ لنک کے منصوبے کیلئے پنجاب حکومت کے ساتھ پارٹنر شپ کی پیشکش کی۔ وفد نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس منصوبے کیلئے پنجاب حکومت کے ساتھ مالی معاونت کیلئے تیار ہیں۔چودھری پرویزالٰہی کے کام بولتے ہیں۔چودھری پرویزالٰہی نے ریسکیو 1122جیسا مثالی ادارہ بنا کرپنجاب کے عوام کے دل جیتے ہیں۔ہم لاہورسیالکوٹ موٹر وے کے ساتھ گوجرانوالہ کو لنک کرنے کے اعلان پر چودھری پرویزالٰہی کے شکرگزار ہیں۔وفد میں علی اشرف،گوجرانوالہ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر فیصل ایوب،سابق صدر عمر اشرف مغل،سابق صدرملک ظہیرالحق،شیخ عرفان سہیل،انور اسلم اوردیگر شامل تھے۔ارکان پنجاب اسمبلی خواجہ داؤد سلیمانی اور عمر فاروق بھی موجود تھے۔

ملاقات

لاہور(جنرل رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی کی زیر صدارت وزیراعلیٰ آفس میں والڈ سٹی لاہوراتھارٹی سے متعلق اعلیٰ سطح کااجلاس منعقد ہوا۔ ڈی جی لاہوروالڈ سٹی اتھارٹی کامران لاشاری نے تفصیلی بریفنگ دی۔اجلاس میں قدیم و تاریخی عمارتوں و مقامات کی ڈرون سے فضائی نگرانی کا فیصلہ کیا گیا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ گنجان آباد علاقوں میں جدید ترین ڈرون کے ذریعے تاریخی عمارتوں کی مانیٹرنگ کی جائے گی اور تاریخی عمارات کے اردگرد تجاوزات کے سدباب کیلئے ڈرون ٹیکنالوجی استعمال کی جائے گی۔ جدید ترین ڈرون سے قدیم عمارتوں ومقامات کوقبضوں سے محفوظ رکھا جاسکے گا۔ وزیراعلیٰ چودھری پرویزالٰہی نے ہدایت کی کہ لاہور والڈ سٹی اتھارٹی کو ڈرون دینے کیلئے ضروری اقدامات کیے جائیں۔ اجلاس میں معمار لاہور سرگنگارام کی ٹیکسالی گیٹ میں قدیم رہائش گاہ کی بحالی پررپورٹ پیش کی گئی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ شیخوپوراں بازار ٹیکسالی گیٹ میں گنگارام کی دکانیں اورکٹری میں میوزیم اورگنگارام گیلری قائم کی جائے گی۔سر گنگا رام جدید لاہور کے معمار ہیں، ان کی سماجی خدمات کو فراموش نہیں کیا جاسکتا۔انہوں نے کہا کہ لاہور پاکستان کا ثقافتی دل ہے،تاریخی حیثیت بحال کریں گے۔لاہور کی تاریخی اور ثقافتی شکل بحال کر کے جدید ترین سیاحتی مرکز بنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ لاہورکی ثقافتی روایات کی بحالی کاکام سابقہ دور میں جہاں چھوڑا تھا،وہیں سے شروع کیا ہے۔ وزیراعلیٰ کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ لاہور کے دہلی دروازے اورشاہی گزرگاہ کی بحالی سے پاکستان کا ثقافتی امیج بہتر ہوا۔ اندرون لاہورمیں 700گھر اور509دوکانوں کو بحال کیاگیا ہے۔اندرون شہر میں انفراسٹرکچر سروسز،گلیوں کی بحالی،واٹر سپلائی سسٹم اورانڈر گراؤنڈ وائرنگ مکمل ہوچکی ہے۔ بریفنگ میں مزید بتایا گیا کہ ”ویکھ لاہور، روشن گلیاں، یاترا اور صوفی نائٹ“ میں شائقین اور سیاح کیثر تعداد میں شرکت کرتے ہیں۔ رم مارکیٹ کو منتقل کرکے بادشاہی مسجد کے عقبی حصے کی تاریخی حیثیت بحال کی جائے گی۔شاہی قلعے پر دنیا کی سب سے بڑی پیچر وال بنائی گئی ہے۔ گلی سجان سنگھ کی بحالی سے سٹریٹ ٹورازم فروغ پارہا ہے۔والڈ سٹی سالڈ مینجمنٹ سسٹم سے صفائی ستھرائی کے معیار کو یقینی بنایا جاتاہے۔بردیناناتھ کنواں،شاہی باورچی خانہ اور شاہی گزرگاہ کو مکمل طورپر بحال کردیا گیاہے۔ بھاٹی گیٹ تا کرتی حاجی اللہ بخش 1028قدیمی دکانوں کو تاریخی حیثیت میں بحال کیاگیا ہے۔ لاہور میں قدیمی عمارتوں اور آثار قدیمہ کی بحالی کے لئے ورلڈ بینک او راے ایف ڈی او ردیگر ادارے بھرپو رتعاون کررہے ہیں۔یوسف صلاح الدین،سابق وفاقی سیکرٹری و چیئرمین پی اینڈ ڈی سلمان غنی،سابق پرنسپل سیکرٹر ی وزیراعلیٰ پنجاب جی ایم سکندر،ڈی جی والڈ سٹی لاہوراتھارٹی کامران لاشاری، پرنسپل سیکرٹری وزیراعلیٰ محمد خان بھٹی،سیکرٹری اوقاف اورڈی جی پی ایچ اور متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔

اجلاس

 لاہور (جنرل رپورٹر) لاہورسمیت دیگر شہروں میں اسموگ میں کمی کے لئے ماحولیاتی ایمرجنسی نافذ کر دی گئی۔وزیراعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی نے لاہور میں ماحولیاتی ایمرجنسی نافذ کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب بھر میں فصلوں کی باقیات کو آگ لگانے پر پابندی عائد ہے۔اسموگ میں کمی کے لئے ماحولیاتی ایمرجنسی نافذ کر دی ہے، اسموگ کو آفت قرار دیا گیا ہے، اسموگ کا سبب بننے والے عوامل پر قابو پانے کیلئے کارروائی کی جائے گی۔وزیراعلی پنجاب نے کہا کہ ایس او پیز پر عملدرآمد میں کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی، فصلوں کی باقیات کو آگ لگانے والے افراد کیخلاف کارروائی کی جائے۔ اس کے علاوہ وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی نے کہا کہ دھواں دینے والی گاڑیوں کے خلاف بلاتفریق قانونی کارروائی جاری رکھی جائے۔واضح رہے کہ دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں لاہور مسلسل پہلے نمبر پر موجود ہے، جس کے باعث بچوں اور بڑوں میں نزلے، زکام، چیسٹ انفیکیشن، بخار اور سانس کی بیماریاں تیزی سے پھیلنے لگیں۔

مزید :

صفحہ اول -