رسالپور، محبت کی کہانی کا افسوسناک انجام، اجتماعی خودکشی کی واردات

رسالپور، محبت کی کہانی کا افسوسناک انجام، اجتماعی خودکشی کی واردات

  

     نوشہرہ (بیورورپورٹ)رسالپور محبت کی کہانی کا افسوس ناک انجام اجتماعی خودکش کی واردات۔محبت کرنے والی لڑکی لڑکے نے جدائی کے ڈر سے ایک ساتھ مرنے کا فیصلہ کرلیا۔پولیس کے مطابق اجتماعی خودکشی کرنے والے 19سالہ زہیب العارفین کی آپنی 17سالہ کرن آریبہ شمس کے ساتھ عرصہ سے محبت کے رشتہ میں دونوں استور کئے ہوئے تھے مالدار چچا شمس العارفین گورئمنٹ ٹیچر بھائی اسرارالعارفین کو بیٹی کا رشتہ دینے سے انکاری تھا۔ایس ایچ او تھانہ رسالپور انسپکٹر نگاہ حسین کے مطابق زہیب العارفین نے آپنی محبوبہ آریبہ شمس سے ملنے کا ٹائم لیا آریبہ شمس کے گھر پہنچا ملاقات کی اور ایک ساتھ مرنے کا وعدہ لیا۔لڑکی آریبہ نے کہا کہ پہلے مجھے قتل کرنا اور اس کے بعد خود کو گولی مار کر آپنی زندگی کا خاتمہ کردنیا تاکہ ایک ساتھ ہمارے جنازے آٹھے پولیس زرائع کے مطابق زہیب العارفین نے پہلے آپنی محبوبہ آریبہ شمس کو فائرنگ کرکے موت کے گھات اتارا اور بھر محبوبہ کے پہلو میں لیٹ کر آپنی کن پٹی پر فائرکرکے آپنی زندگی کا خاتمہ کردیا۔ریسکیو 1122نے دونوں کی نعیشیں پوسٹ مارٹم کے لیے ڈسٹرکٹ ہیڈکواٹر ہسپتال نوشہرہ منتقل کردی۔پوسٹ مارٹم کے بعد تھانہ رسالپور میں اجتماعی خودکشی کا مقدمہ آریبہ شمس کی والدہ کی مدعیت میں درج کیاگیا۔دونوں کی آخری خواہش اس وقت پوری ہوئی جب دونوں کا جنازہ رسالپور جنازہ گاہ میں اجتماعی طور پر ادا کیاگیا۔محبت کرنے والوں کی تدفین ایک دوسرے کے پہلو میں کی گئی نمازہ جنازہ اور تدفین کے موقعہ پر ہر آنکھ اشک بار تھی*

مزید :

پشاورصفحہ آخر -