سائنس نے بھی نوجوان لڑکیوں کو مشورہ دے دیا،مرَدوں کوانتہائی خوش کر دیا

سائنس نے بھی نوجوان لڑکیوں کو مشورہ دے دیا،مرَدوں کوانتہائی خوش کر دیا
سائنس نے بھی نوجوان لڑکیوں کو مشورہ دے دیا،مرَدوں کوانتہائی خوش کر دیا

  

نیویارک (نیوز ڈیسک) کسی بھی انسان کی زندگی میں شادی ایک اہم ترین فیصلہ ہوتا ہے اور ہم میں سے اکثر یہ کوشش کرتے ہیں کہ شادی کے لئے بہترین شریک حیات کا انتخاب کیا جائے مگر کچھ لوگ اس انتخاب میں اس قدر وقت ضائع کر بیٹھتے ہیں کہ زندگی ہی بیت جاتی ہے یا کم از کم شادی کا مناسب وقت تو نکل ہی جاتا ہے۔

مزید پڑھیں:بھوت کو سونگھ کر پہنچاننے والی برطانوی لڑکی مستقبل کی باتیں بتانے لگی

امریکا کی مشی گن سٹیٹ یونیورسٹی نے آئیڈیل کی تلاش میں وقت برباد کرنے والوں کی حالتِ زار کو مدنظر رکھتے ہوئے ایک تحقیق کی جس میں یہ جاننے کی کوشش کی گئی کہ اپنے حسین خوابوں کے مطابق شریک حیات ڈھونڈنا بہتر حکمت عملی ہے یا جو بھی ہاتھ آئے اس کے ساتھ شادی کے بندھن میں بندھ جانا بہتر ہے۔

 تحقیق کے سربراہ کرس ایڈامی کہتے ہیں کہ انہوں نے انسانوں میں شریک حیات ڈھونڈنے کے رویے کے جدید اور قدیم دونوں ادوار کا مطالعہ کیا اور نتیجہ یہ ہے کہ انسان کا ارتقاءہی اس طرح سے ہوا ہے کہ شریک حیات کے انتخاب پر زیادہ وقت برباد کرنا اس کے حق میں نہیں ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ قدیم دور کا انسان ایسے ماحول میں رہتا تھا جہاں جلد از جلد ساتھی کا انتخاب کرنا ہی کامیابی کی ضمانت تھا۔ اگر قدیم دور کا انسان اپنے خوابوں کی شہزادی یا شہزادے کے انتظار میں بیٹھنے کی عادت ڈال لیتا تو وہ ہمیشہ خالی ہاتھ ہی رہتا کیونکہ مقابلے کے جنگلی ماحول میں دستیاب ساتھی کے ساتھ مل کر پہلی فرصت میں ہی اولاد پیدا کرنا انسان کی اولین ترجیح تھا۔ وہ کہتے ہیں کہ ہزاروں سال کے ارتقاءنے انسان کو اس طرح کی مخلوق بنادیا ہے کہ اگر اسے اپنی نسل جاری رکھنے میں کامیاب ہونا ہے اور اپنے جینز منتقل کرنے ہیں تو اس کے لئے بہتر یہی ہے کہ وہ اس شریک حیات کا انتخاب کرلے جو اس وقت اسے دستیاب ہے نہ کہ اس کے انتظار میں بیٹھا رہے کہ جسے وہ اپنے لئے آئیڈیل سمجھتا ہے۔

ڈاکٹر کرس کہتے ہیں کہ وہ تو کنواروں کو یہی مشورہ دیںگے کہ اب اور وقت ضائع مت کریں کیونکہ وقت گزرتے دیر نہیں لگتی اور پھر سوائے پچھتاوے کے کوئی چارہ نہیں رہتا۔

 

مزید : ڈیلی بائیٹس