تنازعہ کشمیر، اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر دیرینہ اور پرانا مسئلہ ہے

تنازعہ کشمیر، اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر دیرینہ اور پرانا مسئلہ ہے

اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر ایک دیرینہ حل طلب مسئلہ کشمیر کاہے پاکستان اوربھارت اس کے فریق ہیں دنیا بھرمیں ہرسال 5فروری کویوم یکجہتی کشمیر منایا جاتا ہے اس روز مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی قابض فوج کے مظالم کیخلاف احتجاج کرکے عالمی ضمیر کوجھنجوڑاجاتا ہے گزشتہ پیرکو بھی پاکستان بھر میں یوم یکجہتی کشمیر پر جہاں عام تعطیل کی گئی وہاں بھارت کے خلاف احتجاجی مظاہرے اورریلیاں نکال کر کشمیریوں سے یکجہتی کااظہارکیاگیا،کشمیر کو بانی پاکستان قائداعظم محمدعلی جناح نے پاکستان کی شہہ رگ قراردیا، یہی وجہ ہے پاکستان روزاول سے کشمیر کا مسئلہ ہرفورم پراٹھاکربھارتی مظالم اورغاصبانہ قبضے کو دنیا کے سامنے لاتا رہا ہے،اس سلسلے میں قومی اسمبلی کی خصوصی کشمیر کمیٹی نے مسئلہ کشمیر کے حل اور مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم کے خلاف اقوام متحدہ کو یادداشت پیش کی، اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے نام لکھی گئی یادداشت میں کہا گیا کہ مسئلہ کشمیر دیرینہ اورحل طلب تنازعہ ہے، پاکستان اور بھارت کے درمیان اس تنازعے کی وجہ سے جنوبی ایشیا کے امن کو بھی خطرہ ہے ۔اقوام متحدہ کی کئی قراردادوں میں یہ ایک متنازع مسئلہ ہے۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں کے حق خود ارادیت کو دبانے کی کوشش کررہاہے۔کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کی ایک تاریخ ہے جس کے لیے انہوں نے لاکھوں جانوں کی قربانی دی ہے۔ بھارت کی جانب سے ایک لاکھ کشمیریوں کو شہید کیاجاچکا ہے۔ 7ہزار لوگوں کو دوران قید قتل کیا گیا ہے۔ 22ہزار عورتیں بیوہ ہوئی ہیں۔ ایک لاکھ پانچ ہزار بچے یتیم جبکہ 11ہزار خواتین کی عصمت دری کی گئی ہے۔ 6ہزار نامعلوم قبریں اور ہزاروں لوگوں کو جعلی مقابلوں میں شہید کیا گیا ہے۔ ارکان کشمیر کمیٹی ملک شاکر بشیر اعوان اور عبدالوسیم کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ ہر سال یہ یادداشت جمع کرانے کا مقصداقوام متحدہ کی منظور کردہ قراردادوں پر عمل درآمد کی یاددہانی کروانا ہے۔ کنٹرول لائن اور ورکنگ بانڈری پر بھارتی خلاف ورزی کے حوالے سے بھی اقوام متحدہ کو آگاہ کیا گیا۔ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم پر عالمی برادری کی خاموشی سوالیہ نشان ہے۔، یادداشت میں اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا گیا کہ فی الفور فیکٹ فائنڈنگ مشن مقبوضہ کشمیر میں بھیجا جائے تاکہ وہ بڑے پیمانے پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا جائزہ لے سکے۔ بھارت پر دباؤ ڈالا جائے کہ وہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بند کرے۔ بھارت سے کہا جائے کہ کشمیر سے فی الفور قابض فوجیوں کا انخلا شروع کرے۔پیلٹ گن کا استعمال بند ہونا چاہیے۔ اقوا م متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کا تیز ترین حل نکالا جائے۔

یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے ایوان صدرمیں بھی سیمینار کاانعقادکیاگیا جس سے صدرمملکت ممنون حسین ودیگر مقررین نے خطاب کیا،صدر مملکت ممنون حسین کاکہناتھاکہ سرزمین کشمیر سے ابھرنے والی خالصتاً مقامی تحریک کو بدنام کرنے کے لیے بھارت ہمیشہ سے اوچھے ہتھکنڈے اختیار کرتا آیا ہے ،تازہ اطلاعات کے مطابق اب دنیا کے مختلف حصوں میں سرگرم بدنام عسکریت پسندوں کو مقبوضہ کشمیر میں متحرک کرنے کی مذموم کوششیں جاری ہیں تاکہ حقیقی تحریک آزادی کو سبوتاژ کیا جا سکے ، یہ منصوبہ نہایت خطرناک ہے جس کے نتائج تباہ کن ہوں گے ،عالمی برادری کشمیری عوام کو حق خود ارادی دلانے کے لیے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے تاکہ خطے میں پائیدار امن کا قیام یقینی بنایا جاسکے۔ وزیر دفاع انجینئر خرم دستگیر خان، صدر آزاد جموں و کشمیر سردار محمد مسعود خان، ،مولانا فضل الرحمان، چیئرمین پارلیمانی کشمیر کمیٹی، رکن قومی اسمبلی شفقت محمود،سینیٹر رحمن ملک، کنونیئر آل پارٹیز حریت کانفرنس غلام محمد صفی اورچیئرپرسن امن و ثقافت کمیٹی حریت کانفرنس مشال ملک نے بھی خطاب کیا ۔

دفاع پاکستان کو نسل اسلام آبا د کے زیر اہتمام یو م یکجہتی کشمیر کے موقع پر ریلی نکالی گئی ،جو سیکٹر آئی ایٹ سے شروع ہو کر چائنہ چوک کے پا س اختتام پذیر ہو ئی ریلی سے خطاب کر تے ہوئے شرکاء کا کہناتھاکہ بھارت نے خطے کا امن تباہ کر دیا ہے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی کھلم کھلا خلاف ورزی ہو رہی ہے ، ہمار اجینا مر نا کشمیریوں کے ساتھ ہے ، کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے، ہم اپنے فوجی جوانوں کی شہادت کا انتقام لیں گے ہم ایک ایک جوان کا بدلہ مودی سے لے کر رہیں گے، نواز شریف نے تحریک عدل کا بیڑہ اٹھایا ہے یہ تحریک عدل نہیں تحریک غدر ہے وہ ملک میں غدرپھیلانا چاہتے ہیں، وزیر اعظم کشمیریوں کے سامنے جھوٹ بول رہا ہے،بھارت کے گیدڑ کشمیری مسلمانوں پر شیلنگ اور فائر کر رہے ہیں،سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلا س کیوں طلب نہیں کیا گیا،مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی کھلم کھلا خلاف ورزی ہو رہی ہے۔اسی طرح مرکزی جمعیت اہلحدیث واہلحدیث یوتھ فورس اسلام آباد/ راولپنڈی کے زیر اہتمام یکجہتی کشمیر ریلی نکالی گئی ریلی کا آغاز آئی نائن فور سے ہوا، زیرو پوائنٹ سے ریلی جب چائنہ چوک پہنچی تومقررین نے شرکاء سے خطاب کیا، جن کاکہنا تھاکہ اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کے حل میں ہرگز مخلص نہیں، کیا وجہ ہے کہ اس کی قرار دادوں سے 1999 ء میں مشرقی تیمور اور 2011 ء میں جنوبی سوڈان کو ریفرنڈم کا حق دیا گیا اور وہاں کے لوگوں کو آزادی مل گئی۔لیکن کشمیر میں حق خودارادیت کی قرار دادیں موجود ہیں مگر بھارت نے اقوام متحدہ کی قرار دوں کو ردی کی ٹوکری میں ڈال رکھا ہے عالمی برادری سے مطالبہ کیا گیاکہ کشمیری عوام کو بھارت کے ظلم وستم سے نجات دلانے کے لیے اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی روشنی میں وہاں ریفرنڈم کے لیے بھارت کو مجبور کیا جائے۔تمام مسلم ممالک کو بھارت کا سفارتی بائیکاٹ کرنا چاہیے یہاں تک کہ وہ کشمیری عوام کو ان کے حقوق دے۔انہوں نے اسلامی ممالک سے مطالبہ کیا کہ کشمیر کی آزادی اور حرمین شریفین کی حفاظت کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔

یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے بھی احتجاجی ریلی سے خطاب کیا انہوں نے مسئلہ کشمیر کو بین الاقوامی سطح پر اجاگر کرنے کے لیے نائب وزیر خارجہ مقرر کا مطالبہ کیا،انکا کہنا تھاکہ اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر پر کیوں خاموش ہے ؟ نواز شریف خود کو کشمیری تو کہتے ہیں مگر کشمیریوں پر ظلم ڈھانے والوں سے تحائف کا تبادلہ کیا جاتا ہے جب تک قوم سڑکوں پر نہین آئے گی اس وقت تک حکمران گونگے بہرے بنے رہیں گے ، ہمیں یک زبان ہو کر مسئلہ کشمیر پر ایک پیغام دینا چاہیے، انہوں نے اقوام متحدہ پر بھی تنقید کرتے ہوئے کہاکہ اقوام متحدہ مشرقی تیمور، جنوبی سوڈان راتوں رات بنا سکتا ہے تو کشمیر پر وہ کیوں گونگا اور بہرہ بنا ہوا ہے۔ کشمیر ہماری شہہ رگ ہے جو دشمن کے قبضہ میں ہے ہم اپنے شہ رگ کو دشمن سے آزاد کرانا چاہتے ہیں ہم تکیمل پاکستان ہوتے دیکھنا چاہتے ہیں ہمارے بچے بچیاں اور بھائی مررہے ہیں کٹ رہے ہیں شہید ہورہے ہیں کشمیر کے قبرستانوں میں ہر طرف پاکستان کا سبز ہلالی جھنڈا ہر قبر پر دکھائی دیتا ہے70 سالوں سے کشمیری 8 لاکھ انڈین آرمی کا مقابلہ کررہے ہیں خالی ہاتھ نوجوان، بچے بچیاں کلاشنکوف کا مقابلہ اپنے بستوں میں موجود کتابوں سے کررہے ہیں کشمیرکے اپنے بچوں کو انکی جرات پر سلام پیش کرتا ہوں۔

مزید : ایڈیشن 1

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...