پارلیمنٹ کے جوائنٹ سیشن میں کشمیر کا ذکر نہ ہونے پر افسوس ہوا: خورشید شاہ

پارلیمنٹ کے جوائنٹ سیشن میں کشمیر کا ذکر نہ ہونے پر افسوس ہوا: خورشید شاہ

لاہور (سپورٹس رپورٹر،آئی این پی) قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے کہا ہے کہ پارلیمینٹ کے جوائنٹ سیشن میں کشمیر کا ذکر نہ ہونے پر افسوس ہوا،پیپلز پارٹی نے ہی کشمیر کی یکجہتی کا دن منانا شروع کیا،ہمارے دور میں مولانا فضل الرحمن نے مسئلہ کشمیر پر بہت کام کیا، آصف زرداری نے بلوچستان حکومت گرانے کی بات نہیں کی، ہمارے سر کٹ گئے پاکستان کو توڑنے کی کبھی بات نہیں کی، سیاسی جماعت کو توڑنے کے حق میں نہیں ہیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیشنل ہاکی سٹیڈیم لاہور میں دوسری پاکستان ویمنز ہاکی لیگ کی شیڈول افتتاحی تقریب میں بطور مہمان خصوصی شرکت کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ میڈیا سے گزشتہ روز گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ کشمیریوں سے اظہار یکجہتی جلسوں سے نہیں حکومتی اقدامات سے ہوتی ہے۔ پارلیمینٹ کے جوائنٹ سیشن میں کشمیر کا ذکر نہ ہونے پر افسوس ہوا۔ کشمیر کی یکجہتی کا دن ہمیشہ کی طرح منایا پیپلز پارٹی نے ہی کشمیر کی یکجہتی کا دن منانا شروع کیاجو بھی حکومت ہو اسے کشمیر کیلئے کوشش کرنا پڑتی ہیں لہٰذامرتے دم تک کشمیریوں کا ساتھ دیتے رہیں گے۔انہوں نے کہا کہ لاہور سمیت چند بڑے شہروں میں کرکٹ کے وسائل نظر آتے ہیں کیونکہ پی سی بی ایک روپیہ بھی ملک کے دور دراز علاقوں پر خرچ نہیں کرتا۔ خورشید شاہ نے کہا کہ اگر کھیل اور ماحولیات کے شعبے ٹھیک ہوجائیں تو پاکستان اور پاکستان کی ہر چیز ٹھیک ہوسکتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ کھیل میں سیاست نہیں ہونی چاہئے۔سیاست کی وجہ سے ہی کھیل میں تباہی آرہی ہے ۔سپورٹس کے اداروں میں زیادہ سے زیادہ فنڈنگ کرنے کی ضرورت ہے تاکہ اس شعبے میں ترقی ہو لیکن افسوس کی بات ہے کہ کھیلوں میں سیاست کا عمل دخل زیادہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہر ادارے کو اپنے دائرہ اختیار میں رہنا چاہئے۔ جب ادارے ایک دوسرے کے دائرہ کار میں مداخلت کرتے ہیں تو پھر مسائل پیدا ہوتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ آج کل کی سیاست میں گالی گلوچ کی سیاست کا عمل دخل زیادہ ہوگیا ہے جو کہ بہت خطر ناک بات ہے جبکہ پپلزپارٹی ایسی سیاست پر یقین نہیں رکھتی کیونکہ سیاست صرف ایشو پر ہونی چاہئے ۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ پپلزپارٹی کو میمو گیٹ سے کو ئی مسئلہ نہیں ہے کیونکہ وہ ایشو مسئلہ ختم ہوچکا ہے ۔

خورشید شاہ

مزید : صفحہ اول