شنگھائی تعاون تنظیم کے مکمل حامی اور تنظیمی رابطوں کی حمایت کرتے ہیں : وزیر اعظم

شنگھائی تعاون تنظیم کے مکمل حامی اور تنظیمی رابطوں کی حمایت کرتے ہیں : وزیر ...

اسلام آباد (آئی این پی228 اے پی پی ) وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ پاکستان شنگھائی تعاون تنظیم کا مکمل حامی ہے اور شنگھائی تعاون تنظیم کے رابطوں کے اقدامات کی حمایت کرتے ہیں جبکہ شنگھائی تعاون تنظیم کے سیکرٹری جنرل ایچ،ای راشد اعلموف نے کہا کہ شنگھائی تعاون تنظیم پاکستان کے دہشت گردی کے خلاف جنگ جیسے کامیاب تجربے سے بہت زیادہ فائدہ اٹھا سکتی ہے ۔شنگھائی تعاون تنظیم کے سیکرٹری جنرل ایچ، ای راشد اعلموف نے وزیر اعظم شاہد خاق عباسی سے وزیر اعظم ہاوس میں ملاقات کی۔ایس سی او کے سیکرٹری جنرل کا پاکستان کے ایس سی او کی مکمل رکنیت کے بعد یہ پہلا دورہ ہے اس موقع پر وزیراعظم نے پاکستان کی رکنیت کے عمل کو تیز کرنے میں سیکرٹری جنرل کا شکریہ ادا کیا اور باہمی اعتماد، فائدے، مساوات، ثقافتی تنوع کے احترام اور عام ترقی کے حصول کیلئے پاکستان کے عزم کو دوبارہ بحال کیا۔ پاکستان شنگھائی تعاون اور اس کے اراکین کے ساتھ تاریخی اور ثقافتی روابط اور مضبوط معاشی اور سٹریٹجک تکمیلیات میں شریک ہے،شنگھائی تعاون کے تمام سرگرمیوں میں پاکستان کی فعال شرکت کو نمایاں کرنا ہے ۔وزیر اعظم نے شنگھائی تعاون تنظیم کے رابطے کے اقدامات کے حوالے سے پاکستان کی حمایت کا اظہار کیا اور سی پیک کوشنگھائی تعاون تنظیم کے6منظور شدہ راستوں سے منسلک کرنے کی پیشکش کی جو چین، روس اور وسطی ایشیا سے منسلک کرنے کیلئے نقل و حرکت میں بہت زیادہ اضافہ کرے گا ۔وزیر اعظم نے ایس او سی کے ترقیاتی بینک، ایس سی او ڈویلپمنٹ فنڈ، ایس سی او کاروباری کونسل، ایس او او انٹربینک کنسورشیم،چھوٹے اور درمیانے درجے کے اداروں پر کی تشکیل سمیت مختلف تنظیموں کیلئے بھی تعاون کا اظہار کیا۔ اس موقع پر سیکرٹری جنرل نے کہا کہ تمام ایس سی او کی سرگرمیوں میں پاکستان کی فعال شرکت کو سراہتے ہوئے کہا کہ پاکستان جیسے نئے اراکین کو شامل کرنے میں بہت شنگھائی تعاون تنظیم ایک حقیقی علاقائی اور کراس براڈینٹل تنظیم کے طور پر ابھر کر سامنے آئی ہے جو دنیا کی سیاست میں ایک کثیر کردار ادا کرتی ہے۔دریں اثنامحسود اور وزیر قبائل کے جرگہ سے بات چیت کرتے ہوئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ نقیب اللہ محسودکا معاملہ صرف صوبائی حکومت کا نہیں بلکہ ریاست کا معاملہ ہے، راؤ انوار کی گرفتاری کے لئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں گے اور انصاف کے تقاضوں کو پورا کیا جائے گا۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ حکومت کی جانب سے نقیب اللہ محسود کے نام پر وزیرستان میں ایک کالج بھی تعمیر کیا جائے گا۔وزیرستان کے عوام کو درپیش مسائل پر بات کرتے ہوئے وزیراعظم نے دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ میں قبائلی عوام کی قربانیوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ پوری قوم قبائلی علاقوں کے عوام کی قربانیوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے اور حکومت ان کی آباد کاری میں ہر ممکنہ تعاون جاری رکھے گی۔ وزیراعظم نے کہا کہ بارودی سرنگوں کے نتیجے میں زخمی ہونے والوں کو حکومت کی جانب سے مناسب معاوضہ فراہم کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ ساتھ دہشت گردی سے متاثرہ علاقے سے بارودی سرنگیں صاف کرنے کے کام کو بھی مزید تیز کیا جائے گا۔جرگے کے اراکین نے عمائدین سے ملاقات کرنے اور قبائلی عوام کے مسائل کے حل کی یقین دہانی پروزیراعظم کا شکریہ ادا کیا۔ جرگے کے اراکین نے کہا کہ قبائلی امن پسند اور محب وطن لوگ ہیں جنہوں نے ماضی میں بھی ملک کے لئے کسی بھی قسم کی قربانی سے دریغ نہیں کیا اور آئندہ بھی ملک کی حفاظت میں پیش پیش رہیں گے۔

وزیراعظم عباسی

مزید : صفحہ اول