پنجاب ایگزامینیشن کمیشن امسال بھی امتحانی معاملات بہتر کرنے میں ناکام رہا

پنجاب ایگزامینیشن کمیشن امسال بھی امتحانی معاملات بہتر کرنے میں ناکام رہا

ملتان (جنرل رپورٹر)پنجاب ایگزامینیشن کمیشن اس سال بھی امتحانی معاملات بہتر کرنے میں ناکام رہا ہے۔سوالیہ پیپرز کا کاغذ انتہائی ناقص ہے۔کئی اضلاع میں پیپر مس پرنٹ مل رہے ہیں ،کہیں کم اور کہیں زیادہ تعداد میں پیپر امتحانی مراکز کو مل رہے ہیں۔پرائمری کلاس کے نو،دس سال عمر(بقیہ نمبر38صفحہ12پر )

کے بچوں کے لئے سوالیہ پیپپرز کے لئے چار چار ورژن ہیں ۔ بچوں کو معروضی اور تھیوری پیپر الگ الگ دئیے جا رہے ہیں جبکہ ان پیپپرز کو بچوں کو اکٹھا دیا جانا چاہئیے تھا ۔ بچوں پہ نگران،ان نگرانوں پہ سپرنٹنڈنٹ اور ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پھر ان پہ ایک اے ای او۔ان سب پر ایک ریزیڈنٹ انسپکٹراور ان سب پہ مزید ایک چھاپہ مار ٹیم مقرر ہے۔اس طرح کروڑوں ڈالر کی مدد ہڑپ کرنے کے لئے اور پرائمری اساتذہ پر شکنجہ کسنے کے لئے کا م کیا جا رہا ہے۔ماہرین تعلیم کے مطابق یہی امتحان ایک ہی دن میں اے ای او لیا کرتا تھااور اس پر لاگت بھی چند سو روپے آتی تھی ۔اب اس پراجیکٹ پر جو سرمایہ برباد کیا جا رہا ہے۔اس سے دیہی علااقوں کی حالت بہتر کی جا سکتی تھی۔

مزید : ملتان صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...