بچوں کے ساتھ جرائم کی روک تھام کی جائے ،عبدالرحمن سلفی

بچوں کے ساتھ جرائم کی روک تھام کی جائے ،عبدالرحمن سلفی

کراچی (اسٹاف رپورٹر) امیر جماعت غربا اہلحد حدیث پاکستان مولانا عبدالرحمن سلفی نے مڈل اسکولز کے اندر بچوں کو جنسی تعلیم دینے کے حکومت کے اعلان پر شدید تشویش کا اظہارخیال کرتے ہوئے کہا کہ قصور واقعہ کی آڑ میں ملک بھر کی لبرل سیکیولر قوتیں ٗ لادین ٗ این جی اوز اور بیرونی آقاؤں کے اشاروں پر ناچنے والے طبقہ نے معصوم بچوں کے ساتھ جرائم کی روک تھام کے لئے قانون سازی کے بجائے معصوم بچوں کے ذہنوں کو گندہ کرنے اوراسلامی اقدار کو ملیا میٹ کرنے کے لئے اپنی بھرپور مہم جوئی شروع کردی ہے۔ جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کلمہ طیبہ کے نام پر وجود میں آیا تھا۔ جس کا آئین اور دستور وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو اس بات پر پابند بناتا ہے کہ ملک میں اللہ اور اس کے رسولﷺ اور شریعت کے خلاف کسی قسم کی کوئی بھی قانون سازی نہیں کی جاسکتی لیکن ملک کے اندر موجود لبرل سیکیولر اور دین مغرب کے دلدادہ چند افراد کسی بھی واقعہ کی آڑ میں حدود قوانین ختم نبوت قانون سمیت دیگر اسلامی قوانین کے خلاف میدان عمل میں آجاتے ہیں۔ اس موقع پر جماعت غرباء اہل حدیث کے ناظم اعلیٰ مفتی انس مدنی نے کہا کہ قصور واقعہ کی بنیادپر نصاب میں جنسی تعلیم کو تصاویر سمیت شامل کرنا بھی اس ناپاک سازش کا حصہ ہے مغربی ممالک میں کمسن بچوں کو جنسی تعلیم دی جاتی ہے اس کے نتائج وہاں کا معاشرہ بھگت رہا ہے۔ جس کی وجہ سے خاندانی نظام ٹوٹ پھوٹ کا شکار جبکہ قریبی رشتہ داروں کا تقدس بھی پامال بری طرح ہورہا ہے لیکن پاکستان کے غیرت مند اور اسلام سے محبت کرنے والے باشعور عوام اس قسم کی شرارتوں اور ناپاک عزائم کو کبھی کامیاب نہ ہونے دیں گے ۔ سندھ حکومت بھی ہوش کے ناخن لے اور پرائمری و مڈل کے نصاب میں اس طرح کا نصاب شامل کرنے سے باز رہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر