’یہ بڑی بڑی اداکارائیں جھوٹ بول رہی ہیں کہ انہیں زیادتی کا نشانہ بنایا گیا، یہ تو۔۔۔‘ دنیا بھر کی خواتین ہی اُٹھ کھڑی ہوئیں، ایسی بات کہہ دی کہ مردوں کو بھی اپنے کانوں پر یقین نہ آئے

’یہ بڑی بڑی اداکارائیں جھوٹ بول رہی ہیں کہ انہیں زیادتی کا نشانہ بنایا گیا، ...
’یہ بڑی بڑی اداکارائیں جھوٹ بول رہی ہیں کہ انہیں زیادتی کا نشانہ بنایا گیا، یہ تو۔۔۔‘ دنیا بھر کی خواتین ہی اُٹھ کھڑی ہوئیں، ایسی بات کہہ دی کہ مردوں کو بھی اپنے کانوں پر یقین نہ آئے

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) ہالی ووڈ کے پروڈیوسر ہاروے ونسٹن پر درجنوں اداکاراﺅں کو جنسی ہراسگی کا نشانہ بنانے کے الزامات عائد ہونے کے بعد سے بڑی بڑی اداکارائیں اپنے ساتھ پیش آنے والے ایسے واقعات کاانکشاف کر رہی ہیں اور سوشل میڈیا پر ’می ٹو‘ (MeToo)کا ہیش ٹیگ بہت مقبول جا رہا ہے۔ تاہم اب خواتین ہی ان اداکاراﺅں کے خلاف اٹھ کھڑی ہوئی ہیں اور ایسی بات کہہ دی ہے کہ سن کر مردوں کو یقین نہیں آئے گا۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق ’می ٹو‘ کا ہیش ٹیگ بین الاقوامی سطح پر چل رہا ہے جس پر اب خواتین نے شکوک و شبہات کا اظہار شروع کر دیا ہے۔ کئی خواتین کا کہنا ہے کہ ”یہ بڑی بڑی اداکارائیں جھوٹ بول رہی ہیں۔ انہیں کسی نے جنسی ہراسگی کا نشانہ نہیں بنایا بلکہ یہ بہتی گنگا میں ہاتھ دھونے اور شہرت حاصل کرنے کے لیے من گھڑت واقعات بیان کررہی ہیں۔“

سوشل ایپلی کیشن Whisperپر ایک خاتون صارف کا کہنا تھا کہ ”اکثر اداکارائیں اپنے 15،20سال پرانے واقعے سنا رہی ہیں۔ اگر واقعی انہیں کسی نے ہراساں کیا تھا تو یہ اتنا عرصہ تک خاموش کیوں رہیں؟ 15سال قبل کسی لڑکے نے ان کے ٹخنے کو بھی ہاتھ لگایا تھا تو اب انہیں یاد آیا کہ اس نے انہیں جنسی ہراساں کیا تھا۔“ ایک اور خاتون نے لکھا کہ ”یہ اداکارائیں سستی شہرت کے لیے جھوٹ بول کر اصل مسئلے سے توجہ ہٹا رہی ہیں۔“ مزید ایک خاتون نے لکھا کہ ”خاتون ہونے کے ناطے میں اس ’می ٹو تحریک‘ پر شرمندہ ہوں۔ میرے خیال میں اس تحریک نے حقیقت میں جنسی ہراسگی کا شکار ہونے والی خواتین کی آواز دبا دی ہے اور بڑی بڑی اداکاراﺅں نے ساری توجہ اپنی طرف مبذول کرا لی ہے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس