مردہ زندہ ہوکرانصاف کے لئے سیشن کورٹ پہنچ گیا

مردہ زندہ ہوکرانصاف کے لئے سیشن کورٹ پہنچ گیا
مردہ زندہ ہوکرانصاف کے لئے سیشن کورٹ پہنچ گیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(نامہ نگار)کوٹ خواجہ سعید میں مکان پر قبضے کے لئے اوورسیز پاکستانی محمد مشتاق کو کاغذات میں مردہ قرار دے کرسول کورٹ سے مکان کی جعلی ڈگری حاصل کرلی گئی۔ دھوکے کا علم ہونے پر متاثرہ شخص محمد مشتاق سیشن کورٹ پہنچ گیا۔

ایڈیشنل سیشن جج مستحسن منہاس نے خادم حسین کے خلاف اندراج مقدمے کی درخواست پر گجرپورہ پولیس سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔عدالت میں کوٹ خواجہ سعید کا رہائشی اوورسیز پاکستانی محمد مشتاق پیش ہوا جس نے بتایا کہ ان کے مکان پر خادم حسین نامی شخص نے قبضہ کر لیا ہے۔ کاغذات میں محمد مشتاق مردہ کوقرار دےکر ڈگر ی حاصل کر لی ہے ، ملزم نے عدالت میں جھوٹ بولا کہ مشتاق نے اپنی زندگی میں مکان فروخت کر دیا تھا۔مشتاق نے موقف اختیار کیا کہ دھوکہ دہی کی انتہا کر کے ایک زندہ شخص کو ہی مردہ قرار دے دیا گیا،عدالت میں مشتاق کے ساتھ اس کا بھائی ارشد پیش ہواجس نے عدالت کو بتایا کہ اس کے بھائی کومردہ ظاہر کرنے کے ساتھ ساتھ جعلی ڈیتھ سرٹیفکیٹ بھی پیش کیا گیا، علم ہونے پر اس نے بھائی سے رابطہ کیا،عدالت میں محمد مشتاق کے وکیل نے بتایاکہ سول عدالت نے دھوکے کا علم ہونے پر ڈگری خارج کر دی اور مقدمہ کے لئے سیشن کورٹ سے رجوع کرنے کی ہدایت کی ہے۔

لائیو ٹی وی دیکھنے کے لئے اس لنک پر کلک کریں

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور