کھپریاں والا جزیرے کا ماحولیاتی جائزہ لینے پر غور

کھپریاں والا جزیرے کا ماحولیاتی جائزہ لینے پر غور

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


کراچی (اسٹاف رپورٹر)ماہی گیری کے دوسرے بڑے مرکزابرہیم حیدری سے ڈیڑھ کلو میٹر کے فاصلے پر واقع کھپریاں والا جزیرے کے ماحولیاتی جائزے سے پتہ چلے گا کہ وہاں کی ماحولیاتی صورتحال کیسی ہے اور وہاں قدرتی ذرائع کس نوعیت کے ہیں اور ان میں بہتری کیسے لائی جاسکتی ہے تاکہ جزیرے کو سیاحتی مقام کے طور پر اندرون و بیرون دنیا میں متعارف کرایا جاسکے۔سیکریٹری محکمہ ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ خان محمد مہر کی زیر صدارت جمعرات کو ہونے والے اجلاس میں طے کیا گیا کہ کھپریاں والا جزیرے کے ماحولیاتی جائزے کے لیے مطلوبہ تقاضوں کی تفصیلات مرتب کی جائیں گی تاکہ ان کی روشنی میں مذکورہ سرگرمی کا موثر منصوبہ بناکر اس کی مجاز اداروں سے منظوری لی جاسکے۔اجلاس میں یہ بھی طے کیا گیا کہ پچیس اسکوائر کلو میٹر رقبے پر محیط جزیرے سے متصل ماہی گیر آبادیوں کی ماحولیاتی صورتحال کو بھی مدنظر رکھا جائے گا اور وہاں کی مجموعی ماحولیاتی صورتحال کی بہتری کے لیے مطلوب اقدامات کو بھی زیر غور جائزے میں شامل کیا جائے گا۔اجلاس میں بتایا گیا کہ مذکورہ جزیرے میں نایاب اقسام کی جنگلی, زمینی اور آبی حیات کی موجودگی کی اطلاعات ہیں جن میں پانچ فٹ طویل کیچوا اور پانی و خشکی پر یکساں زندہ رہنے والی ڈسٹ اسکپر نامی مچھلی بھی شامل ہے جن کی بقا کے تسلسل کا جائزہ لینا بے حد ضروری ہے تاکہ حیوی تنوع(بائیو ڈائیورسٹی) کی حفاظت بھی یقینی بنائی جاسکے۔اس ضمن میں محکمہ ماحولیات کے متعلقہ افسران نجی ماہرین کی مشاورت سے جائزے کے اہداف, مقاصد اور دائرہ کار پر جامع رپورٹ پندرہ دن میں مزید کارروائی کے لیے پیش کریں گے.