کورونا وائرس کے خلاف بڑی کامیابی متوقع، چینی ڈاکٹروں نے کس دوا سے تجربہ شروع کر دیا؟ بڑی خبر آ گئی

کورونا وائرس کے خلاف بڑی کامیابی متوقع، چینی ڈاکٹروں نے کس دوا سے تجربہ شروع ...
کورونا وائرس کے خلاف بڑی کامیابی متوقع، چینی ڈاکٹروں نے کس دوا سے تجربہ شروع کر دیا؟ بڑی خبر آ گئی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) چین سے پھیلنے والے موذی وائرس کے خلاف طبی ماہرین ایک بڑی کامیابی کے قریب پہنچ گئے ہیں۔ میل آن لائن کے مطابق ماہرین نے کوئی نئی دوا ایجاد نہیں کی بلکہ پہلے سے موجود ایک دوا کے متعلق کہا جا رہا ہے کہ وہ کورونا وائرس کے خاتمے کے لیے بہت مو¿ثر ثابت ہو رہی ہے۔ اس دوا کا نام ’Remdesivir‘ ہے جو کیلیفورنیا کے تحقیقاتی ادارے جیلیڈ سائنسز نے 2016ءمیں بنائی تھی۔ یہ دوا ’ایبولا‘ وائرس کے خاتمے کے لیے بنائی گئی تھی لیکن امریکہ میں ہی اس کا تجربہ کیا گیا ہے جس میں ثابت ہوا ہے کہ یہ دواکورونا وائرس کے خاتمے کے لیے بھی انتہائی مو¿ثر ہے۔
امریکہ میں کورونا وائرس کا جو پہلا مریض سامنے آیا تھا اسے واشنگٹن کے ایک ہسپتال میں زیرعلاج رکھ کر یہی دوا دی گئی جس سے وہ صحت مند ہو گیا۔ اب چین میں بھی طبی ماہرین نے مریضوں پر اس دوا کا تجربہ کیا ہے اور اس کے نتائج بہت شاندار سامنے آئے ہیں جس پر چینی ماہرین نے اس دوا کی ’سندِ حق ایجاد‘ (Patent)حاصل کرنے کے لیے درخواست دے دی ہے لیکن یہ دوا ایجاد کرنے والے ادارے جیلیڈ سائنسز کا کہنا ہے کہ اس 2016ءمیں تمام دنیا کے لیے اس دوا کی سندِ حق ایجاد حاصل کی تھی چنانچہ اب چین اس کی ملکیت کا حق حاصل نہیں کر سکتا اور اسے نہیں بنا سکتا۔ بتایا گیا ہے کہ یہ دوا انسانی جسم میں جا کر ایک ایسے پروٹین کو بلاک کر دیتی ہے جو کورونا وائرس کو نمو پانے اور انسانی جسم میں اپنی تعداد بڑھانے میں مدد دیتا ہے۔ چنانچہ جب کورونا وائرس کی تعداد بڑھنی بند ہو جاتی ہے تو نہ صرف اس کا پھیلاﺅ کم ہوتا ہے بلکہ مریض کی حالت بھی ٹھیک ہونے لگتی ہے۔