طلبہ یونینز پر پابندی ہٹائی جائے،پاکستان کی لبرل اور سیکولر قیادت ناکام ہوگئی:سراج الحق

طلبہ یونینز پر پابندی ہٹائی جائے،پاکستان کی لبرل اور سیکولر قیادت ناکام ...

  

 لاہور(نمائندہ خصوصی) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ طبقاتی نظام تعلیم نے ملک کی جڑیں کھوکھلی کردیں۔ نہ جانے یکساں نصاب تعلیم کا وعدہ کب پورا ہوگا۔ تین کروڑ سے زائد بچے سکولوں سے باہر، ہائر ایجوکیشن کے لیے مختص فنڈز میں مسلسل کمی ہورہی ہے۔ طلبہ یونینز پر پابندی ہٹائی جائے۔طلبہ کو آئینی حق سے محروم رکھنا ظلم ہے۔ اشرافیہ خوفزدہ ہیں کہ یونیورسٹیوں اور کالجز سے اٹھنے والی بیداری کی لہر ان کی کشتی کو ہمیشہ کے لیے نہ ڈبو دے۔ غربت کی بنیاد پر تعلیمی اداروں کو تقسیم کیا گیا ہے جواستحصالی نظام کو سپورٹ فراہم کرتے ہیں۔ ظلم کا راج ہے، قرضوں کا ہمالیہ قوم کے سروں پر مسلط کردیا گیاہے۔ پاکستان کی لبرل اور سیکولر قیادت ناکام ہو گئی۔ ممبران اسمبلی کی پارلیمنٹ کے فلور پر وہ گالیاں سنائی دیتی ہیں جو گلیوں کے غنڈے بھی نہیں دیتے۔ اگر سیاسی طور پر تربیت یافتہ افراداسمبلیوں میں جائیں تو قوم کو یہ تماشا نہ دیکھنا پڑے۔ پی ٹی آئی اور پی ڈی ایم نے یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پرسیاسی دکانداری چمکائی۔ اخلاق وکردار سے عاری لوگ قوم پر مسلط ہیں ملک ایسے مرحلے میں داخل ہو چکاکہ سرمایہ دارانہ نظام کو دریا برد کرنے کے لیے بھرپور جدوجہد کا آغاز کیا جائے اور اس کو سہارا دینے والوں سے بھی جان چھڑائی جائے۔ پاکستان میں وسائل کی کمی نہیں۔ اربوں ڈالر کا پانی ہر سال ضائع ہوتاہے۔ سودی نظام معیشت کی وجہ سے کروڑوں افراد کے گھروں میں غربت نے ڈیرے لگارکھے ہیں۔اسلامی جمعیت طلبہ اس ملک کا مستقبل ہیں،قیادت تیار ہو کر ملک کی باگ ڈورسنبھالے۔ ڈسپلن اور نظم و ضبط سے طاقتور اشرافیہ سے مقابلہ کیا جاسکتاہے۔اسلامی انقلاب پاکستان کی منزل ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گجرات میں اسلامی جمعیت طلبہ کے 68 ویں اجتماع ارکان سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقعپر ڈاکٹر طارق سلیم امیر جماعت شمالی پنجاب اور ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیتطلبہ پاکستان حمزہ محمد صدیقی بھی موجود تھے۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ ہمارا مقابلہ استعمار کے ایجنٹوں سے نہیں بلکہان قوتوں سے ہے جو مسلم دنیا کے ریسورسز پر قابض اور امت مسلمہ کو اپناغلام بنائے رکھنے کی پالیسی پر کاربند ہے۔ ملک پر کمزور اخلاق سے عاریافراد حکومت کر رہے ہیں۔ ان حکمرانوں نے کشمیر کا ز کو سبوتاڑ کیا اورلاکھوں شہدا کے خون سے غداری کی۔ انہوں نے کہاکہ غریب کے پاس علاج کے لیے پیسے نہیں ان کے بچے سکول نہیں جاتے اور انہیں انصاف کے لیے در در کی ٹھوکریں کھانا پڑتی ہیں۔ قوم کے ہاتھوں میں آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کی ہتھکڑیاں پہنا دی گئی ہیں۔ اب لوگوں کے پاس ایک چوائس ہے کہ اس نظام کیخلاف جدوجہد کا آغاز کریں اور تحریک اسلامی کے دست و بازو بنیں۔

سراج الحق 

مزید :

صفحہ آخر -