آج بھی کروڑوں کی ٹرانزیکشنز بیگز میں ہوتی ہیں ،آئی ایم ایف بھی یہی چاہتا ہے کہ ڈاکیومنٹڈ اکانومی ہو ،چیف جسٹس عامر فاروق کے فنڈنگ کیس میں ریمارکس

 آج بھی کروڑوں کی ٹرانزیکشنز بیگز میں ہوتی ہیں ،آئی ایم ایف بھی یہی چاہتا ہے ...
 آج بھی کروڑوں کی ٹرانزیکشنز بیگز میں ہوتی ہیں ،آئی ایم ایف بھی یہی چاہتا ہے کہ ڈاکیومنٹڈ اکانومی ہو ،چیف جسٹس عامر فاروق کے فنڈنگ کیس میں ریمارکس

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پیپلزپارٹی ،جے یو آئی اور (ن )لیگ کیخلاف پارٹی فنڈنگ کیس میں چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ الیکشن کمیشن کو چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ اور فرانزک ایکسپرٹ کو بھی ہائیر کرنا چاہیے ، آج بھی کروڑوں کی ٹرانزیکشنز بیگز میں ہوتی ہیں ،آئی ایم ایف بھی یہی چاہتا ہے کہ ڈاکیومنٹڈ اکانومی ہو ، بڑے شہروں میں اربوں کی ٹرانزیکشنز پرچی پر ہورہی ہیں۔

نجی ٹی وی چینل" ہم نیوز"کے مطابق پیپلزپارٹی ،جے یو آئی اور (ن) لیگ کیخلاف پارٹی فنڈنگ کیس کی اسلام آباد ہائیکورٹ میں سماعت ہوئی ،الیکشن کمیشن نے پیشرفت رپورٹ عدالت میں جمع کرا دی،چیف جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا سکروٹنی مکمل ہونے میں کتنا وقت لگے گا؟ڈی جی لاء الیکشن کمیشن نے کہاکہ ہزاروں ٹرانزیکشنز کا معاملہ ہے، کام کررہے ہیں۔

وکیل پی ٹی آئی نے کہاکہ ان کے کیسز پی ٹی آئی کیساتھ شروع ہوئے لیکن مکمل نہیں ہو سکے،الیکشن کمیشن کی رپورٹ کی کاپی ہمیں بھی فراہم کی جائے ،عدالت نے کہاکہ آپ اس میں ڈائریکشن چاہتے ہیں کہ جلد سکروٹنی مکمل کی جائے؟وکیل درخواست گزار نے کہاکہ پہلے ہی اتنا وقت گزر چکا، پی ٹی آئی کیساتھ امتیازی سلوک کیاگیا۔

ڈی جی لا ءالیکشن کمیشن نے کہاکہ سکروٹنی کمیٹی کو میں ہی ہیڈ کررہا ہوں ، اکاؤنٹنٹ بھی کمیٹی کا حصہ ہیں ، چیف جسٹس عامر فاروق نے کہاکہ الیکشن کمیشن کو چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ اور فرانزک ایکسپرٹ کو بھی ہائیر کرنا چاہیے ، آج بھی کروڑوں کی ٹرانزیکشنز بیگز میں ہوتی ہیں ،آئی ایم ایف بھی یہی چاہتا ہے کہ ڈاکیومنٹڈ اکانومی ہو ، بڑے شہروں میں اربوں کی ٹرانزیکشنز پرچی پر ہورہی ہیں ، اسلام آباد ہائیکورٹ نے کیس کی سماعت 2 مارچ تک ملتوی کردی۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -