’اگر یہ کام ہوگیا تو پھر 100 دن بعد زمین پر صرف 100 انسان زندہ رہ جائیں گے‘ سائنسدانوں نے جدید تحقیق میں سب سے خوفناک وارننگ دے دی

’اگر یہ کام ہوگیا تو پھر 100 دن بعد زمین پر صرف 100 انسان زندہ رہ جائیں گے‘ ...
’اگر یہ کام ہوگیا تو پھر 100 دن بعد زمین پر صرف 100 انسان زندہ رہ جائیں گے‘ سائنسدانوں نے جدید تحقیق میں سب سے خوفناک وارننگ دے دی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) زومبی اب تک ایک تخیلاتی کردار تھا جس پر”زومبی لینڈ“ جیسی کئی مشہور فلمیں بھی بن چکی ہیں لیکن برطانوی ماہرین نے ہولناک انکشاف کر دیا ہے کہ زومبی حقیقت کا روپ دھارنے والے ہیں۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق لیسیسٹر یونیورسٹی کے ماہرین نے ایک پیجیدہ فارمولا تیار کیا ہے جس سے معلوم ہوا ہے کہ ”100دن کے اندر ”زومبی وائرس“ پوری دنیا پر حملہ آور ہونے جا رہا ہے۔ یہ وائرس روئے زمین پر موجود ہر ایک انسان کو لاحق ہو گا اور اسے موت کے گھاٹ اتار دے گا۔ پوری دنیا میں صرف 100انسان اس وائرس سے عارضی طور پر محفوظ رہیں گے اور 6ماہ کے عرصے میں وہ بھی اس وائرس کے باعث مر جائیں گے یا پھر خود زومبی بن جائیں گے۔“

وہ عورت جس نے جنسی زیادتی کا نشانہ بننے کے بعد وہ دلیرانہ کام کردیا جو تاریخ میں کوئی اور خاتون نہ کرسکی تھی، نئی مثال قائم کردی

رپورٹ کے مطابق لیسیسٹر یونیورسٹی کے طلبہ نے ریاضی کا یہ انتہائی پیچیدہ ماڈل تیار کیا ہے جس سے یہ خطرناک پیش گوئی سامنے آئی ہے۔ بعض سائنسدانوں کے مطابق زومبی وائرس دراصل پاگل پن کا سبب بننے والے ”ریبیز وائرس“ (Rabies Virus)ہی کی ترقی یافتہ شکل ہے۔ جس طرح ریبیز وائرس سے متاثرہ جانور کسی دوسرے جانور یا انسان کو کاٹ لے تو وہ بھی پاگل ہو جاتا ہے اسی طرح زومبی وائرس بھی تیزی کے ساتھ ایک سے دوسرے انسانوں میں پھیلے گا اور وہ زومبی بنتے جائیں گے اور موت کے منہ میں اترتے جائیں گے۔یہ دونوں وائرس انسانوں اور جانوروں کے دماغ پر حملہ آور ہوتے ہیں۔ ماہرین کے مطابق ریبیز وائرس ہی کی زومبی وائرس میں مبتلا انسان بھی خود پر کنٹرول کھو بیٹھے گا اور دوسروں کو کاٹے گا اور انہیں بھی اس میں مبتلا کر دے گا۔یہ سلسلہ یونہی تیزی کے ساتھ پھیلے گا اور 6ماہ میں دنیا سے آخری انسان بھی اٹھ جائے گا۔

اگر واقعی انسانیت اس تباہی سے دوچار ہوتی ہے تو سائنسدانوں نے اس سے بچنے کے لیے کچھ احتیاطی تدابیر بھی بیان کی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ”جو شخص زومبی بن جاتا ہے اس کا عصبی نظام معطل ہوجاتا ہے لہٰذا اسے جسمانی درد کا احساس نہیں ہوتا۔ اسے قتل کرنے کے لیے گولیاں چلائیں یا کچھ اور ماریں، اسے تکلیف نہیں ہو گی، لہٰذا اگر آپ کا سامنا زومبی سے ہوتا ہے تو لڑنے کی بجائے اس سے دور بھاگنا ہی بہترین آپشن ہے۔ اس کے علاوہ اگر زومبی آپ کے اردگرد موجود ہیں تو خاموش رہیے۔ ان کی یادداشت اور ایک طرف توجہ مرکوز کرنے کی صلاحیت نہ ہونے کے برابر ہوتی ہے۔ اگر آپ سے بچنے کے لیے چھپتے ہیں تو خاموش رہیے، اس طرح یہ آپ کو تلاش نہیں کر پائیں گے۔آپ ان کی توجہ کو آسانی سے دوسری طرف مبذول کرکے وہاں سے بچ کر بھاگ سکتے ہیں۔ اس کے آتشبازی کا سامان بہترین چیز ہے۔ ان کی توجہ اس طرف ہو جائے گی اور آپ ان کو یاد نہیں رہیں گے۔“

اہرام مصر سے ملنے والا 3 ہزار سال پرانا شہد، سائنسدانوں نے اس کا معائنہ کیا تو ایسا انکشاف سامنے آگیا کہ سب حیران پریشان رہ گئے، کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا کہ۔۔۔

سائنسدانوں کا مزید کہنا تھا کہ ”زومبی سے کبھی گفتگو کرنے اور انہیں سمجھانے کی کوشش مت کریں۔ ان کا عصبی نظام ناکارہ ہونے کی وجہ سے یہ نہ تو ٹھیک سے بول پائیں گے اور نہ آپ کی بات سمجھ پائیں گے۔ لہٰذا انہیں سمجھانے میں وقت ضائع مت کریں اور جلد از جلد ان سے دور جانے کی کوشش کریں۔ ان سے بچنے کا آسان اور انتہائی کارگر طریقہ یہ ہے کہ اگر آپ کا ان سے سامنا ہوتا ہے تو آپ بھی انہی جیسی حرکات کرنا شروع کر دیں۔ ان میں چہرے سے لوگوں کو شناخت کرنے کی صلاحیت نہیں ہوتا۔ یہ صرف حرکات اور آوازوں سے ایک دوسرے کو پہچانتے ہیں۔ جب آپ ان کی طرح اداکاری شروع کر دیں گے توان کے درمیان میں سے گزر کر دوسری طرف جا سکیں گے اور یہ آپ کو نقصان نہیں پہنچائیں گے۔ لیکن اس کے لیے آپ کو ان کی بہترین نقل کرنا ہو گی۔“

رپورٹ کے مطابق اگر آپ خوش قسمتی سے بچ گئے تو آپ ان چند خوش نصیبوں میں سے ایک ہوں گے جو پوری دنیا میں اس آفت سے محفوظ رہ سکیں گے۔ ممکن ہے آپ کے اردگرد ہزاروں میل تک اور کوئی انسان زندہ نہ ہو۔ ایسے میں آپ کو کچھ بنیادی کام آتے ہونے چاہئیں۔ آپ اپنے لیے کپڑا بنا سکتے ہیں، دھات سے اوزار بنا سکتے ہیں۔ فصلیں اگا سکتے ہوں اور کچھ بچ جانے والے جانوروں کی افزائش کرنا جانتے ہوں۔ اس طرح آپ اس دنیا میں ایک نئی نسل کی ابتداءکریں گے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -