گورنمنٹ ٹیکنیکل ووکیشنل سنٹر کے ملازمین کی ہڑتال اور مظاہرہ

گورنمنٹ ٹیکنیکل ووکیشنل سنٹر کے ملازمین کی ہڑتال اور مظاہرہ

  

پشاور( سٹاف رپورٹر) گورنمنٹ ٹیکنیکل ووکیشنل سنٹر کے ملازمین نے فنی تربیتی اداروں کی غیر قانونی اور غیر آئینی بندر بانٹ کے خلاف انسٹرکٹرز ایسوسی ایشن کی کال پر علامتی ہڑتال کی اور ٹائر جلا کر احتجاجی مظاہرہ کیا مظاہرین نے فنی تربیتی اداروں کی بقاء کیلئے دھرنے لگائے اس موقع پر ایسوسی ایشن کے صدر اظہار الحق جنرل سیکرٹری نصراللہ خان اور دیگر نے مظاہرین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ایک سازش کے تحت خیبر پختونخوا کے تمام ووکیشنل ادارے ائیر فورس کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جو کہ آئین قانون اورٹیوٹا ایکٹ کے منافی ہے مقررین نے کہا اس سے قبل آزمائشی طور پر 12فنی تربیتی ادارے اور کروڑوں روپے کے فنڈ ائیر فورس کو دیئے گئے جبکہ یہ بات آن ریکارڈ ہے کہ دو سال کے دوران مذکورہ ادارے چلانے میں ناکام ثابت ہوگئے اس کے باوجود نہ صرف مذکورہ بارہ اداروں کیلئے ڈیڑھ ارب روپے فنڈ جاری کئے جا رہے ہیں بلکہ مزید دیگر تمام فنی تربیتی ادارے بھی ان کے حوالے کئے جا رہے ہیں مقررین نے کہا کہ پی اے ایف حکام نے پہلے سے لئے گئے12اداروں میں کام کرنے والے درجنوں سرکاری ملازمین کو بھی بے دخل کیا ہے جو کہ غیر قانونی اور پشاور ہائی کورٹ کے احکامات کے منافی ہے مقررین نے کہا کہ فنی تربیتی ادارے قومی اثاثہ ہیں جنکی تباہی سے پختون قوم کے کم تعلیم یافتہ نوجوانوں کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا مقررین نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ووکیشنل اداروں کی بقاء کیلئے وہ کسی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے اور احتجاجی تحریک کا دائرہ وسیع کرتے ہوئے اپنے بچوں کو بھی احتجاج میں شامل کر کے بنی گالہ اور المرکز اسلامی سمیت ہر جگہ دھرنے دینگے اور پرامن مظاہرے کرینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -