قیمتی جانوں کی ہلاکت کے ذمہ داران کوسزا نہ ملنے کے باعث ٹرین حادثات میں اضافہ

قیمتی جانوں کی ہلاکت کے ذمہ داران کوسزا نہ ملنے کے باعث ٹرین حادثات میں اضافہ

  

ملتان(جنرل رپورٹر)قیمتی انسانی جانوں کی ہلاکت کے ذمہ داران کو سزا نہ ملنے کے باعث ٹرینوں کے حادثات میں اضافہ‘ بچوں کے سروں سے سایہ اور ماؤں کی گود اجاڑنے والے چند روز معطل رہنے کے بعد دوبارہ بحال ہو جاتے ہیں تفصیل کے مطابق ٹرین حادثہ میں متعدد افراد کی ہلاکت کے بعد انتظامیہ کی جانب سے ذمہ داران کو صرف چند روز کے لئے معطل کیا جاتا ہے اور بعد ازاں معاملہ ٹھنڈا (بقیہ نمبر14صفحہ12پر )

ہونے پر وہی ملازمین دوبارہ بحال ہوجاتے ہیں آج تک کسی ریلوے ملازم کو ریاست کی جانب سے مجرمانہ غفلت پر سزا نہیں ہوئی‘ 6ماہ قبل شیر شاہ کے قریب عوام ایکسپریس حادثہ میں متعدد افراد کی ہلاکت کے بعد ذمہ داران کو صرف معطل کیا گیا جو دوبارہ بھی بحالی کے ہاتھ پاؤں ماررہے ہیں اگر ریلوے انتظامیہ انکوائری میں قصور وار ثابت ہونے کے بعد انہیں نوکری سے برخاست کردیتی اور اتنی قیمتی جانوں کے ضیاع پر ان کے خلاف کیس چلایا جاتا تو آئندہ کے لئے حادثات پر قابو پایا جاسکتا تھا مگر ہمیشہ کی طرح معطلی کے بعد حکمران اور افسران خود کو بری الذمہ قرار دلوالیتے ہیں ‘اب 8ماؤں کی گود اجاڑنے والے ذمہ دار ان مبینہ ڈرائیور ‘فائر مین اور گیٹ مین کو بھی انکوائری کے بعد صرف معطلی کے آرڈر تھمادےئے جائیں گے ۔عوامی حلقوں نے شدید احتجاج کرتے ہوئے ذمہ داران کو نوکری سے برخاست کرکے ان کے خلاف سول عدالت میں کیس چلانے کی اپیل کی ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -