ہزاروں ترک فوجی ایک ایسا حملہ کرنے کی تیاری کرنے لگے کہ سنتے ہی ہر مسلمان کے ہاتھ دعا کیلئے بلند ہو جائیں گے‎

ہزاروں ترک فوجی ایک ایسا حملہ کرنے کی تیاری کرنے لگے کہ سنتے ہی ہر مسلمان کے ...
ہزاروں ترک فوجی ایک ایسا حملہ کرنے کی تیاری کرنے لگے کہ سنتے ہی ہر مسلمان کے ہاتھ دعا کیلئے بلند ہو جائیں گے‎

  

دمشق (مانیٹرنگ ڈیسک) داعش نے عراق و شام میں کئی سال سے دہشت کا بازار گرم کر رکھا ہے لیکن حال ہی میں اس کے کارندوں کی ترکی میں کاروائیاں اسے بے حد مہنگی پڑ گئی ہیں۔ ترکی نے اس تنظیم کے خلاف خوفناک آپریشن شروع کر دیا ہے اور اب اس پر ایک بڑا حملہ کسی بھی وقت ہونے کو ہے۔

ویب سائٹ Yenisafak.comکی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ داعش کے مرکز رقہ سے صوبہ الباب کا رابطہ منقطع ہونے کے بعد یہاں اس کے ہزاروں شدت پسند پھنسے ہوئے ہیں۔ داعش کی ایک کاروائی میں ترکی کے 14 فوجیوں کی ہلاکت کا واقعہ پیش آنے کے بعد داعش کے خلاف آپریشن عرفات شیلڈ میں تیزی آ گئی ہے، اور اب 8ہزار سے زائد ترک فوجی الباب صوبے میں داعش پر ٹوٹ پڑنے کے لئے تیار ہیں۔ اس آپریشن میں دیگر بھاری ہتھیاروں کے ساتھ درجن بھر تھنڈر سٹارم ہووٹزر توپیں اور آرمرڈ انفینٹری استعمال کی جائے گی۔ حملے کا آغاز کرنے سے پہلے علاقے میں تین فوجی اڈے بھی قائم کر دئیے گئے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ترک افواج نے داعش کو رقہ کی جانب سے کسی بھی قسم کی امداد کی فراہمی کا راستہ روکنے کی تیاری بھی مکمل کرلی ہے۔ توقع ظاہر کی جارہی ہے کہ الباب پر حملہ ہوگا تو یہاں پھنسے داعش کے شدت پسندوں کو فرار کا کوئی راستہ میسر نہیں آئے گا۔ رپورٹ کے مطابق شام میں جاری ترک آپریشن میں پہلے ہی 1ہزار سے زائد دہشتگردوں کو ہلاک کیا جاچکا ہے جبکہ دوہزار مربع کلومیٹر سے زائد علاقہ بھی دہشتگردوں سے آزاد کروایا گیا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -