گیس کی لوڈشیڈنگ سے چولہے ٹھنڈے پڑ گئے ،عوام بازار سے مہنگی روٹی خریدنے پر مجبور

گیس کی لوڈشیڈنگ سے چولہے ٹھنڈے پڑ گئے ،عوام بازار سے مہنگی روٹی خریدنے پر ...

لاہور( افضل افتخار) صوبائی دارالحکومت کے مختلف مقامات پر گیس کی شدید لوڈشیڈنگ نے عوام کی زندگی اجیرن کردی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کی وجہ سے گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہوگئے عوام بازاروں کا مہنگا کھانا خریدنے پر مجبور، تفصیل کے مطابق سردی کی شدت کی وجہ سے گیس کی قلت کی وجہ سے صارفین مشکلات کا شکار ہیں اس حوالے سے صارفین کا کہنا ہے کہ حکومت کو اس جانب توجہ دینے کی ضرورت ہے گیس بنیادی ضرورت ہے جس سے ہم محروم ہیں اور ہر سردیوں میں ہمیں اس مشکل کا سامنا کرنا پڑتا ہے غریب لوگوں کو اس وقت ہی ریلیف ملے گا جب ان کو حکومت کی جانب سے بنیادی ضروریات کی بلاتعطل ترسیل ہوگی ۔روز نامہ پاکستان کے زیر اہتمام کئے گئے سروے میں عوام پھٹ پڑے جوہر ٹاؤن کے رہائشی عبدالشکور ،عبدالرؤف ،ضیاء الدین اور رشید الدین نے کہا کہ ہم گیس کی عدم دستیابی سے شدید مشکلات کا شکار ہیں دن میں اگر گیس آجائے بھی جائے تو پریشر بہت کم ہوتا ہے ۔ عوام کو پاگل بنایا ہوا ہے ہم سارا سارا دن گیس کے انتظار میں رہتے ہیں جب اس حوالے سے محکمہ سے بات کی جاتی ہے تو وہ بھی جھوٹی تسلیاں دیتی ہے کہ گیس آجائے گی مگر افسوس اس طرف کوئی توجہ نہیں دی جارہی ہے ۔خواتین نائلہ،صائمہ،رخسانہ،سدرہ،نداء ، عاصمہ،شاہینہ اور شازیہ نے کہا کہ ہم گیس کی عدم دستیابی پر بہت پریشان ہیں اور حکومت بھی اس حوالے سے ہمیں ریلیف دینے میں ناکام ہوگئی ہے تبدیلی کے نام پر ہمارے ساتھ وہی سلوک کیا جارہا ہے جو اس سے قبل حکومتوں نے کیا اور ہمیں کسی قسم کا کوئی ریلیف نہیں دیا اگر حکومت نے عوام کو ریلیف نہ دیا تو آئندہ انتخابات میں عوام ووٹ نہیں دیں گے گیس کی قلت کی وجہ سے بچے ناشتہ کئے بغیر سکول جاتے ہیں او ر اس مہنگائی میں ہم بازار سے کھانا افورڈ نہیں کرسکتے ہم حکومت سے اپیل کرتے ہیں کہ اس طرف توجہ دی جائے اور اس مسئلہ کو جلد از جلد حل کیا جائے ۔

گیس سروے

لاہور( نیوزرپورٹر)گھروں میں گیس نہ آنے کی وجہ سے نان بائیوں نے نان اور روٹی مہنگے داموں بیچنا شروع کردی جس سے عوام ایک نئی مشکل میں مبتلا ہوگئی ہے گھروں میں گیس کی عدم دستیابی کی وجہ سے لوگ تندوروں کارخ کررہے ہیں جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے دکانداروں نے دس روپے والا نان بارہ روپے جبکہ پانچ روپے کی روٹی سات روپے کی کردی ہے جس پر عوام شدید مشکل کا شکار ہیں اور ان کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ ہم پہلے ہی گھروں میں گیس نہ ہونے کی وجہ سے بہت پریشان ہیں اب نان بائی بھی اس کا بھرپور فائدہ اٹھارہے ہیں اور ہم مجبور ہیں یہ صرف اور صرف حکومت کی نااہلی ہے جس کی وجہ سے یہ صورتحال پیش آرہی ہے نان بائیوں نے حکومت کی اجازت کے بغیر ریٹ بڑھادئیے ہیں او ر ان کے ا س اقدام پر ان کوکوئی بھی پوچھنے والا بھی نہیں ہے ہم حکومت سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس حوالے سے اپنا بھرپور کردار ادا کرے اور مہنگے داموں نان اور روٹی بیچنے والوں کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لائے اور ان کے خلاف ایکشن لیا جائے تاکہ یہ پرانی قیمت پر روٹی فروخت کریں اور ہمیں ریلیف مل سکے اس حوالے سے نان بائیوں کا کہنا ہے کہ گیس ہمیں مل نہیں رہی اور ہم عوام کی سہولت کے لئے اب لکڑیاں جلا کر اپنا کاروبار چلارہے ہیں اور ان کو بھی سہولت دے رہے ہیں اور اس مہنگائی کیو جہ سے ہم مجبور ہیں اور قیمت ہم نے بڑھائی ہے حکومت بھی ہمیں کوئی ریلیف نہیں دے رہی جس کی وجہ سے ہم نے عارضی طور پر قیمت بڑھائی ہے حکومت گیس فراہم کرے تو ہم بھی قیمت پرانی کرنے پر تیار ہیں اور ہم تو خود مجبور ہیں اور حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس حوالے سے ہمیں بھرپور ریلیف دیا جائے تاکہ ہم آگے عوام کو بھی اس کا فائدہ پہنچائیں ہم اس وقت مجبور ہیں اور اس کی وجہ گیس کی قیمت میں اضافہ اور اس کی لوڈشیڈنگ ہے ۔

نان بائی

مزید : صفحہ اول