مقبوضہ کشمیر میں شدید برف باری ، سٹرکین بند، بجلی غائب ، معمولات زندگی ٹھپ

مقبوضہ کشمیر میں شدید برف باری ، سٹرکین بند، بجلی غائب ، معمولات زندگی ٹھپ

سوپور+کپوارہ+گاندربل+اوڑی(اے این این ) شمالی کشمیر کے قصبہ سوپور، رفیع آباد اور زینہ گیر کے علاقوں میں برفباری کے سبب معمولات زندگی ٹھپ ہوکر رہ گئے ہیں۔ تمام رابطہ سڑکیں منقطع ہیں جبکہ بجلی کی سپلائی سے بھی عوام محروم ہوگئی ہے ۔زینہ گیر اور رفیع آباد نے انتظامیہ پر الزام لگایا ہے کہ ان علاقوں کی بیشتر سڑکیں برف کی وجہ سے بند پڑی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ زینہ گیر اور سوپور کی رابطہ سڑکوں پر برف ہٹانے کی مشینریاں دوپہر تک غائب رہیں جبکہ علاقوں میں بجلی گزشتہ رات سے ہی بند کی ئی تھی۔ ڈپٹی کمشنر بارہمولہ نے صورتحال کے پیش نظرسوپور کا دورہ کیا اور تمام افسران خاصکر محکمہ بجلی، آر اینڈ بھی اور میونسپل کونسل کو ہدایات دی کہ وہ قصبے میں تمام سہولیات دستیاب رکھیں تاکہ عام لوگوں کو مشکلات درپیش نہ آئیں۔انہوں نے ایگزیکٹیو آفیسر میونسپل کونسل سوپور لطیف احمد میر کی سراہنا کی جنہوں نے مین قصبہ میں ایک سو سے زائد خاکروبوں اور جے سی بی کو صبح سے ہی برف ہٹانے کے کام پر لگا رکھا تھا۔ ضلع کپوارہ کی چوکی بل کرناہ سڑک پر جمعہ کو تقریبا45لوگ برفانی طوفان میں پھنس گئے جن میں ایک معمر خاتون بعد میں حرکت قلب بند ہونے کے نتیجے میں لقمہ اجل بن گئیں تاہم کرالہ پورہ پولیس نے موقعہ پر جاکر تمام مسافروں کو بچایا لیا اور لاش کو نستہ گلی فوجی کیمپ میں رکھا ۔ ادھر ضلع میں گزشتہ دوروز کے دوران بھاری برف باری کا سلسلہ جاری ہے اور اب تک ضلع کے فرکیاں اور زیڈ گلی پر5فٹ برف ریکارڈ کی گئی جبکہ کیرن اور مژھل کے اندرونی علاقوں میں2سے 3فٹ برف جمع ہوئی ہے ۔ٹنگڈار میں 9انچ برف ریکارڈ کی گئی جبکہ نستہ ژھن گلی (سادھنا ٹاپ ) پر4فٹ برف جمع ہوئی ہے جس کی وجہ سے یہ سڑکیں بند پڑی ہیں ۔ضلع کے کرالہ پورہ ،لنگیٹ ،رامحال ،قاضی آ باد ،راجواڑ ،لولاب ،ماور اور ترہگام کے مضافاتی علاقوں میں بھاری برفباری کی وجہ سے نظام زندگی مفلوج ہو کر رہ گئی ہے اور لوگ اپنے ہی گھر وں میں محصور ہوکر رہ گئے ہیں ۔ضلع کی بیشتر اندرونی رابطہ سڑکیں بند پڑی ہیں ۔ بھاری برف باری کے نتیجے میں وادی کا زمینی اور فضائی رابطہ پوری دنیا کے ساتھ سنیچر کو دوسرے روز بھی منقطع رہا اس دوران وادی کے متعدد علاقوں میں بجلی سپلائی متاثر رہی جبکہ اندرونی سڑکوں سے برف نہ ہٹانے کے نتیجے میں وادی کے متعدد علاقوں کے لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ۔محکمہ موسمیات نے اگلے چند روز تک موسم ٹھیک رہنے کا امکان ظاہر کیا ہے ۔سرینگر میں سنیچر کی صبح تک برف باری کا سلسلہ جاری رہا جس کے نتیجے میں ضلع کی سڑکیں برف سے بھر گئیں اگرچہ انتظامیہ نے مشینری کو متحرک رکھتے ہوئے رابطہ سڑکوں سے برف ہٹانے کا کام مکمل کیا تاہم کئی اندرونی سڑکوں سے برف نہیں ہٹائی گئی جبکہ ضلع کے متعدد علاقوں میں بجلی سپلائی بھی دن بھر متاثر رہی ۔اس دوران بین االاقوامی ہوائی اڈہ سے صرف 3پروازیں ہی اڑان بھر پائیں جبکہ 23پروازیں خراب موسم کی وجہ سے منسوخ کی گئیں ۔ بانڈی پورہ میں برف باری کی وجہ سے عام زندگی مفلوج ہوکر رہ گئی ہے سڑکوں پر برف جمع ہونے سے گاڑیوں کی آوا جاہی میں بڑے پیمانے پر خلل پڑی ہے۔ اگرچہ ضلع انتظامیہ نے متحرک ہوکر سڑکوں سے برف ہٹانے کیلئے مشینری کو کام پر لگادیا تھا تاہم سنیچر کی شام تک صرف بانڈی پورہ اور سوپور بانڈی پورہ شاہراہ سے برف ہٹائی گئی تاہم ضلع کی اندرونی سڑکوں سے برف نہیں ہٹائی جا سکی ہے۔ جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں برف باری کے سبب بازار ویران نظر آئے، جبکہ ٹریفک کی نقل وحرکت بھی نہ ہونے کے برابر رہی ۔

مقبوضہ کشمیر

مزید : علاقائی