مودی سرکار اپنی نبیڑے!

مودی سرکار اپنی نبیڑے!

  



وزیراعظم عمران خان نے ننکانہ صاحب میں ہونے والے واقعہ کو اپنے ویژن کے خلاف قرار دیا اور کہا ہے کہ ذمہ دار افراد کو قرار واقعی سزا دی جائے گی، وزیراعظم نے بھارتی میڈیا کی طرف سے اس معاملے کو زیادہ بڑھا چڑھا کر پیش کرنے کی مذمت کی اور کہا بھارت میں مسلمانوں پر حملے اور ننکانہ صاحب کے واقعہ میں کوئی مماثلت نہیں ہے۔ مودی سرکار تو مسلمانوں پر حملوں کی نہ صرف حمائت کرتی بلکہ پیش پیش رہتی ہے اور پولیس بھی آر ایس ایس کے غنڈوں کے ساتھ مل کر نقصان پہنچاتی ہے۔ وزیراعظم کے علاوہ وفاقی وزیر دفاع اعجاز شاہ نے بھی انہی خیالات کا اظہار کیا اور کہا کہ ملک میں مکمل آہنگی اور یہاں اقلیتیں اور ان کے مقدس مقامات محفوظ ہیں، انہوں نے ایک پریس کانفرنس کی ان کے ساتھ صوبائی وزیرمیاں محمود الرشید اور پارلیمانی سیکرٹری اقلیتی امور اور انسانی حقوق مہندر پال سنگھ بھی تھےّ سید اعجاز شاہ نے سکھ برادری کے ساتھ ملاقات کے بعد بتایا کہ ملک دشمن افراد کی شرات، حالات خراب کرنے کی کوشش ہے لیکن ایسا نہیں ہونے دیا جائے گا مقدمہ درج کر لیا گیا اور کسی ملزم کو معاف نہیں کیا جائے گا، مزید اطلاع یہ ہے کہ مقدمہ توہین مذہب اور انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعات کے تحت درج کیا گیا اور ایک ملزم کو گرفتار بھی کر لیا گیا ہے۔وزیراعظم کا ردعمل اور اقدام بروقت ہے، وفاقی وزیر داخلہ کی نگرانی میں پولیس ملزموں کا تعاقب کر رہی ہے، یہ بھی درست ہے کہ پاکستان میں اقلیتیں قطعی محفوظ اور پُرامن ہیں اور یہاں رواداری ہے کہ سب پاکستانی ہیں بھارتی میڈیا کا جہاں تک سوال ہے تو سب کا سب پاکستان مخالف ہے ذرا معمولی سی بات کو پھر ترور مروڑ کر پیش کرکے بدنام کرنے کی کوشش کی جاتی ہے، ادھر سے بروقت جواب دیا گیا اور اب تو ایک ملزم بھی زیر حراست ہے۔ باقی کے لئے کارروائی جاری ہے۔ وزیراعظم نے خود اس کا نوٹس لیا اور بجا کہا کہ مودی کو آئینے میں اپنا ہی چہرہ نظر آتا ہے۔ اس کی حکومت کی طرف سے پاکستان کے خلاف الزام تراشی تعجب انگیز نہیں کہ بھارت میں ہونے والے احتجاج اور واقعات سے بیرونی ممالک کی توجہ ہٹانا بھی مقصود ہے۔ ورنہ ابھی تو گزشتہ روز ہی آر ایس ایس کے غنڈوں نے پولیس کی چھتر چھاؤں میں دہلی یونیورسٹی کے اندر گھس کر طلباء و طالبات کو زخمی کیا ہے اور ان کا کچھ نہیں بگڑا اسی لئے مودی کو یہ کہنا کہ تو اپنی نبیڑ دوسرے کو کیا کہنا ہی واجب ہے۔ تاہم پولیس کو جلد از جلد ملزموں کو گرفتار کرکے پروپیگنڈے کا موثر جواب دینا چاہیے۔

مزید : رائے /اداریہ