بارش سے خشک سردی‘ سموگ‘ موسمی بیماریاں ختم‘ کاشتکار بھی خوش

  بارش سے خشک سردی‘ سموگ‘ موسمی بیماریاں ختم‘ کاشتکار بھی خوش

  



 ملتان‘ روہیلانوالی‘ مظفر گڑھ‘ عبدالحکیم‘ میلسی‘ اوچشریف‘ کوٹ ادو‘ ہارون آباد‘ راجن پور‘ گڑھ مہاراجہ‘ وہاڑی‘ لیہ (سپیشل رپورٹر‘ بیورو رپورٹ‘ نمائندگان پاکستان) ملتان میں گزشتہ روز بھی وقفہ وقفہ سے بارش کا سلسلہ جاری رہا،خشک سردی کا زور ٹوٹنے کے ساتھ سردی کی شدت میں اضافہ ہو(بقیہ نمبر39صفحہ12پر)

گیا آج بھی بادل چھائے رہیں گے اس ضمن میں ملتان سمیت مضافاتی علاقوں میں گزشتہ روز دن بھر وقفہ وقفہ سے کبھی تیز اور کبھی ہلکی بارش کا سلسلہ جاری رہا جس کے نتیجہ میں خشک سردی کا زور ٹوٹ گیا ہے ماہرین کے مطابق مذکورہ بارش سے سموگ کا خطرہ ٹلنے کے ساتھ ساتھ موسمی بیماریوں کی شدت میں کمی آئے گی تاہم سرد موسم سے بچنے کیلئے حفاظتی اقدامات کو یقینی بنایا جائے زرعی ماہرین کے مطابق مذکورہ بارش سے گندم سمیت ربیع کاشتہ فصلوں پر مثبت اثرات مرتب ہونگے۔محکمہ موسمیات کے مطابق گزشتہ روز ملتان میں ہونے والی بارش 9ملی میٹر ریکارڈ کی گئی تاہم آج بھی ملتان میں بادل چھائے رہنے کا امکان ہے۔ منیجنگ ڈائریکٹر واسا نسیم خالد چانڈیو کی ہدایت پرحالیہ بارشوں کے سلسلے کے باعث واسا میں ہائی الرٹ جاری ہے اتوار کے روز سے جاری وقفے وقفے سے بارش کا سلسلہ جاری رہنے پر سوموار کے روز نکاسی آب کے لیے اقدامات کا سلسلہ تیز کر دیا گیا تمام سیوریج اور ڈسپوزل اسٹیشن کے افسران اور سٹاف کو صبح سویرے فیلڈ میں طلب کر کے اپنی اپنی حدود میں ٹیموں اور مشینری کو متحرک کرنے کا حکم دیا گیا خصوصا ڈپٹی ڈائریکٹر ڈسپوزل اسٹیشنز کو ہدایت کی گئی کہ وہ تمام ڈسپوزل اسٹیشن پر متعلقہ ایس ڈی او اور دیگر سٹاف کی حاضری کو یقینی بنائیں اور بارش تیز ہوتے ہی ڈسپوزل اسٹیشنز کو فل کیپسیٹی پر چلایا جائے اوراور تمام ڈسپوزل سٹیشنوں کو فری فال چلایا جائے انہوں نے ڈپٹی ڈائریکٹر سیوریج کو تمام اہم شاہراہوں سے بارش کا پانی سکر مشینری کے ذریعے بھی اٹھانے کی ہدایت کی تاکہ شہریوں کو آمدورفت اور ٹریفک کی روانی میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے ایم ڈی واسا نے شہر کے مختلف علاقوں اور ڈسپوزل اسٹیشن کا دورہ کرکے نکاسی آب کے انتظامات کا معائنہ بھی کیا اس دوران دوپہر 12 بجے تک ریکارڈ کی جانے والی بارش سے متعلق رپورٹ بھی ایم ڈی واسا کو پیش کی گئی رپورٹ کے مطابق چونگی نمبر9،کڑی جمنداں ڈسپوزل اسٹیشنز پر 9ملی میٹر،سمیجہ آباد ڈسپوزل اسٹیشن پر 8.5 ملی میٹر اور پرانا شجاعباد روڈ ڈسپوزل اسٹیشن پر 8 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی کے اس دوران انہوں نے تمام سیوریج اور ڈسپوزل اسٹیشن افسران، سٹاف کو ایس او پی کے مطابق الرٹ رہنے اور شہر بھر سے بارش کے پانی کی مکمل نکاسی تک فیلڈ میں اپنی حاضری کو یقینی بنانے کی ہدایت کی۔ ملتان میں ہلکی بارش کے باعث شہر کی سٹرکوں پر کچڑ بن گیا جس کے باعث ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے سینکڑوں سینٹری ورکرز فیلڈ میں جانے کے بجائے گھروں تک محدود ہو کر رہ گئے اور شہر میں صفائی کا عمل شروع نہیں  ہوسکا اور نہ گلیوں، بازاروں سے کوڑا کرکٹ اٹھایا جا سکا ہے۔ ملک بھرکے دیگرحصوں کی طرح گزشتہ دوروز سے ملتان اورنواحی علاقوں میں ہونے والی بارش نے ریلوے کے جدیدسگنل سسٹم کی قلعی کھل کررکھ دی ہے۔بتایا جاتاہے کہ بارش کے باعث لودھراں تاچیچہ وطنی مختلف مقامات پرسگنل سسٹم خراب ہوگیا۔جس کی وجہ سے مسافرٹرینوں کو پیپرلائن کلیئرکے تحت چلایاجارہاہے۔ریلوے ذرائع کے مطابق بارش کے باعث ریلوے کے سنٹرل بیس لاکنگ سسٹم میں نمی آجاتی ہے۔جس کی وجہ سے سگنل سسٹم درست کام نہیں کرتا۔نمی ختم ہوتے ہی سسٹم خودبہ خودٹھیک ہوجائیگا۔آئندہ دوروزتک مزیدبارشوں کی پیش گوئی کومدنظررکھتے ہوئے ریلوے انتظامیہ نے ٹرین ڈرائیوروں اور دیگر آپریشنل سٹاف کوبھی الرٹ محفوظ ٹرین آپریشن جاری رکھنے کے لئے ہدایات جاری کی ہیں۔گزشتہ روزریلوے شعبہ سول انجینئرنگ کے گینگ مین بارش کے دوران ریلوے ٹریک سے نکاسی آب کے لئے کام کرتے رہے۔ بارش نے ملتان سمیت جنوبی پنجاب میں بجلی کا ترسیلی و تقسیمی نظام معطل کرکے رکھ دیا ہے۔24 گھنٹے سے جاری بوندا باندی کے باعث میپکو ریجن میں 100 سے زائد فیڈرز متاثر ہوئے۔ شہری فیڈرز کی بندش سے گھنٹوں بجلی سے محروم رہے۔ بارش کیباعث بحالی کے کاموں میں بھی تاخیر کا سامنا رہا۔ ہلکی بارش کے باعث ٹرانسفارمر خراب ور جلنے کی شرح میں بھی اضافہ ہوا۔ ذرائع کے مطابق بہت بڑی تعداد میں گھریلو میٹر بھی مسلسل بارش سے جل گئے۔ دوروزسے جاری خراب موسم اور بارش نے ٹرینوں کا پہلے سے تباہ شدہ شیڈول کومزید درہم برہم کرکے رکھ دیاہے گزشتہ روز کراچی ایکسپریس، تیز گام،جعفر ایکسپریس،علامہ اقبال ایکسپریس،پاکستان ایکسپریس،شاہ حسین ایکسپریس،اور عوامی سمیت دیگر گاڑیاں 4 سے 11 گھنٹے کی تاخیر کا شکار رہیں جس کی وجہ سے مسافروں کو شدید سردی اور بارش مین انتظار کی اذیت سے گزرنا پڑا - تفصیلات کے مطابق ملتان سمیت ملک کے دیگر علاقوں میں جاری بارش نے ٹرینوں کا شیڈول مزید درہم برہم کر کے رکھ دیا ہے - کراچی سے لاہور جانے والی شاہ حسین ایکسپریس 6 گھنٹے، پاکستان ایکسپریس 5گھنٹے، کراچی ایکسپریس 4گھنٹے، تیز گام ساڑھے 4 گھنٹے، لاہور سے کراچی جانے والی شالیمار ایکسپریس ساڑھے 5 گھنٹے کی تاخیر سے ملتان کینٹ اسٹیشن پرپہنچیں - خیبر میل ساڑھے 4گھنٹے، ملت ایکسپریس 6 گھنٹے اور ہزارہ ایکسپریس 8 گھنٹے کی تاخیر سے ملتان پہنچیں جبکہ فرید ایکسپریس 3 گھنٹے تاخیر کا شکار رہی، ٹرینوں کی گھنٹوں کی تاخیر نے مسافروں کو پریشان کئے رکھا اور وہ بارش اور شدید ٹھنڈ میں کئی گھنٹے تک ٹرینوں کی آمد کے منتظر رہے۔ روہیلانوالی شہر وگردو نواح میں دوسرے روزبھی ہلکی بارش کاسلسلہ جاری۔موسم سرماکی بارش سے درختوں،پودوں اوراورفصلوں پرنکھارآگیابارش سے فصلوں پربہت اچھے اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ بارش اورسردی میں حفاظتی اقدامات کے بغیرگھومنے سے سینہ کے انفکشن اوربخارسمیت سانس کی بیماری میں مبتلا ہونے کاخدشہ ہے۔ مسلسل بارش نے ضلعی صدر ہسپتال مظفرگڑھ میں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے بنائی گئی پناہ گاہ میں ناقص میٹریل اور غیر معیاری انتظامات کا پول کھول دیا. ڈی ایچ کیو ہسپتال کے شلٹر ہوم میں چھت ناکارہ ہونے کی وجہ سے پناہ گاہ میں بارش کا پانی جمع ہو گیا. جس سے بارش سے پناہ گاہ میں مقیم مریضوں کے لواحقین سخت پریشان ہیں. لواحقین کا سامان خراب ہو گیا. جبکہ سونے کی بھی جگہ نہیں رہی, دن بھر پانی ٹپکتا رہا. بارش کے سبب عبدالحکیم شہر کی اندرون بازار سڑکیں جوکہ پہلے بھی ٹوٹ پھوٹ کا شکار تھیں گزشتہ دویوم کی بارش کے سبب مذکورہ سڑکوں کی حالت مزید ابتر ہوگئی ہے متذکرہ سڑکیں کھانے کے مراکز وبیکریوں نے توڑیں تھیں تاحال عدم مرمت کے سبب اور ناہموارراستوں کی وجہ سے پھسلن پیدا ہورہی ہے۔ بارش کی وجہ سے میلسی شہر کے اکثر علاقے کیچڑ اور بارش کے پانی کی لپیٹ میں آ گئے ناقص سیوریج سسٹم کی وجہ سے گلیاں اور بازار ندی نالوں کا منظر پیش کرنے لگے میلسی شہر کا سرکلر روڈ، چوک گیارویں والا، بوائز ڈگری کالج روڈ، مترو روڈ، دین پورہ، گلزار ٹاؤن اور اندرون شہر کے اکثر علاقوں میں میونسپل کمیٹی کے عملے کی نااہلی کی وجہ سے لوگ شدید پریشانی میں مبتلا ہیں اور انہیں گھر تک پہنچنے کیلئے متبادل راستے اختیار کرنا پڑتے ہیں ملک بھر کی طرح اُوچ شریف اور گردونواح کے علاقوں میں بھی موسم ابر آلود،بارش اور بوندہ باندی کا سلسلہ جاری ہے بارش کے ساتھ ساتھ ٹھنڈی ہواؤں کا بھی راج ہے جس سے سردی کی شدت میں ایک بار پھر اضافہ ہو گیا ہے اُوچ شریف شہر میں نکاسی آب کا انتظام نہ ہونے کے باعث وقفہ وقفہ سے جاری رہنے والی موسلادھار بارش کے باعث،گلیوں،محلوں،سڑکوں پر پانی جمع دشواری کا سامنا کر نا پڑا۔ کوٹ ادو وگردونواح میں گزشتہ2 روز سے شروع ہونے والی بارش کا سلسلہ تا حال وقفے وقفے سے جاری ہے جسکی وجہ سے سردی کی شدت میں اضافہ ہو گیا ہے،بارش سے بجلی وٹیلی فون کا نظام بھی کئی علاقوں میں معطل ہوگیا جبکہ گلیوں اور سڑکات پر پانی بھر جانے سے بارش کا پانی لوگوں کے گھروں اور دوکانوں میں داخل ہو گیا جسکی وجہ سے لوگوں کو آنے جانے میں شدید دشواری کا سامنا رہا،بارش کا سلسلہ تاحال وقفے وقفے سے جاری ہے۔ ہارون آباد اور گردونواح میں دن بھر وقفے وقفے سے بارش کا سلسلہ جاری رہا، بارش کی وجہ سے سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا جبکہ دھند کا راج ختم ہوگیا، بارش کے باعث شہر کی نشیبی مقامات پر پانی کھڑا ہونے سے راہگیروں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑا، بارش سے معمولات زندگی متاثر ہوئے، بازاروں میں کاروباری سرگرمیاں بھی ٹھپ ہو کر رہ گئیں، زرعی ماہرین نے حالیہ بارش کو گندم کی فصل کیلئے سونے کی بوند قرار دیتے ہوئے پیداوار اور معیار میں اضافہ کی اُمید طاہر کی ہے، سردی بڑھنے کی وجہ سے شہر میں بعض مقامات پر سوئی گیس کے پریشر میں کمی کا مسئلہ بھی دیکھنے میں آرہا ہے، گرم کپڑوں کی مانگ میں اضافہ ہوا ہے، کوئلے اور خشک لکڑیوں کی قیمت طلب اور قیمت میں بھی بڑھ گئی ہے۔ اوچشریف کے شہریوں میں اکرم، تنویر، بہزاد، انور، عربی، اطہر، سفیان، عقیل، عباس، ظریف و دیگر نے احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ اگر محکمہ سوئی گیس کی لوڈشیڈنگ پر قابو نہیں پایا تو ہم محکمہ سوئی گیس کے خلاف شدید احتجاجی مظاہرہ شروع کریں گے۔ راجن پور کوٹ مھٹن مرغائی ونگ ہیڈ حامد عاقل پور نور پور شہر اور گردونواح میں وقفہ وقفہ سے بارش کا سلسلہ رات بھر سے جاری بارش کے باعث سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیاسکول کا پہلا دن بچوں اور والدین کو سکول جانے میں دشواری کا سامنا بارش کی وجہ سے پرانی ٹوٹی پھوٹی گلیوں اور سڑکوں پر پانی جمع ہوگیا۔ گڑھ مہاراجہ اور گردونواح میں گزشتہ روزشروع ہونے والی بارش تاحال جاری ہے بارش کے باعث گلیوں میں پانی جمع شہر کی کئی سڑکیں بارش کا پانی کھڑاہونے سے دریا کا منظر پیش کر رہی ہیں لوگوں گھروں میں۔محصور ہو کر رہ گے ہیں گڑھ مہاراجہ اور گردونواح میں گزشتہ روز شروع ہونے والی بارش کا سلسلہ تاحال وقفے وقفے سے جاری ہے جس کے باعث سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا ہے شدید سردی اور بارش کے باعث لوگ گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے ہیں اسکے ساتھ ساتھ ایل پی جی گیس میں مصنوعی مہنگائی کے باعث لکڑی کی مانگ میں اضافہ ہو گیا ہے شہریوں کو گیس کی مہنگائی ہونے سے شدید مشکلات کا سامنا ہے دوسری جانب اگر بات کی جاے نکاسی آب کی تو سڑکوں پر بارش کا پانی کھڑا ہونے سے سڑکیں دریا کا منظر پیش کر رہی ہیں جس کے باعث شہریوں کو آمدورفت میں مشکلات درپیش ہیں۔ شہر اور نواحی علاقوں میں گزشتہ روز سے گہرے بادلوں کے ساتھ رم جھم کا سلسلہ جاری ہے وقفہ وقفہ بارش برسنے سے جہاں سردی کی شدت میں اضافہ ہوا وہیں معمولات زندگی بھی متاثر ہوئی ہیں شہر میں لوگوں کی آمد ورفت انتہائی کم دکھائی دے رہی ہیاور سکول کالجز اور سرکاری دفاتر میں حاضری کم رہی ہے جبکہ بارش برسنے سے متعدد بجلی کے فیڈرز ٹرپ ہوگئے جس سے کئی علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی ہے اور محکمہ سوئی گیس حکام کی جانب سے گیس کی غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ بھی جاری ہے جس سے لوگوں کو مشکلات اور پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جبکہ پھسلن اور کیچڑ سے متعدد افراد زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں محکمہ موسمیات کے مطابق بارش کا سلسلہ کل تک جاری رہنے کا امکان ہے۔ وہاڑی شہر اور گردونواح میں گیس کی لوڈ شیڈنگ سیگھریلو صارفین کو شدید مشکلات کاسامنا کرنا پڑ رہا ہے اور شدید سردی میں شہری گیس کی لوڈ شیڈنگ سے پریشان ہیں گیس کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کی وجہ سے شہریوں نے لکڑیاں اور ایل پی جی گیس خریدنے کا رخ کہ لیاموجودہ وقت میں لکڑیاں 500 روپے سے 600 روپے من فروخت کی جارہی ہیں شہری پریشان لکڑیاں اور گیس فروخت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ ہمیں لکڑیاں اور گیس پیچھے سے مہنگی مل رہی ہیں مجبوراً ہم اس وجہ سے لکڑیاں اور گیس مہنگے داموں فروخت کررہے ہیں گیس کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ شروع ہوا تو ایل پی جی گیس بھی مہنگے داموں فروخت ہونے لگی ایل پی جی گیس 200 روپے فی کلو تک جا پہنچی جو شہریوں کی قوت خرید سے باہر ہیشہریوں محمد اکرام اویس مجید اورنگزیب حمزہ عثمان محمد شکیل راشد عمران رانا عبدالرحمن ودیگر کی جانب سے موجودہ حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ گیس کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کو ختم کیا جائے ڈپٹی کمشنر اظفر ضیاء نے بارش کے دوران نکاسی آب،صفائی کی صورت حال اور میونسپل عملے کی کارکردگی چیکنگ کے لیے شہر بھر کا دورہ کیا۔جس کے دوران انہوں نے تمام سنیٹری سٹاف کو الرٹ رہنے،متعلقہ مشینری کو فیلڈمیں فنکشنل رکھنے اور بارش کے پانی کی مکمل نکاسی تک آپریشنل فرائض سرانجام دینے اور ڈسپوزل ورکس کو بلاتعطل چلانے کی ہدایات دیں۔اسی طرح انہوں نے بجلی نہ ہونے کی صورت میں جنریٹر استعمال کرنے کی ضرورت پرزوردیااور متنبہ کیا کہ غیر حاضرعملے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔اے سی لیہ نیاز احمدمغل ہمراہ تھے۔

بارش

مزید : ملتان صفحہ آخر