بینظیر انکم سپورٹ پروگرام سے مستحق افراد بھی آوٹ‘ گھروں میں فاقے

  بینظیر انکم سپورٹ پروگرام سے مستحق افراد بھی آوٹ‘ گھروں میں فاقے

  



ڈیرہ غازیخان(ڈسٹرکٹ بیورورپورٹ)بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے آٹھ لاکھ سے زائد افراد کانام نکال دینے کی اسٹیٹمٹ چیئرپرسن بی آئی ایس پی ثانیہ نشترنے دی تھی اور وجوہات جوہات بیان کی گئی ہیں کہ یہ کارڈ ہولڈرز اس امدادکے مستحق نہیں ہیں۔ اس حوالے سے گراونڈ پیش کی گئی کہ اس کے لیے چنداشارتی ٹولزطے کئے گئے جس میں یہ بھی شامل ہے کہ کارڈ ہولڈرخاتون یا اس (بقیہ نمبر45صفحہ7پر)

گھرانے کے کسی فردنے اگر پاسپورٹ بنوارکھا ہے یااس پر سفر کیا ہے وہ بھی بی آئی ایس پی کا استحقاق نہیں رکھتا۔ بی آئی ایس پی کے بارے ری اسسمنٹ سروے شروع کیا گیا تھا جوکہ تعطل کاشکارہے۔ اس ری اسسمنٹ سروے میں نئے خاندان شامل اور کئی خارج ہوسکیں گے۔ قطع نظراس کے کہ کون حقدارہے کون نہیں لیکن ڈیرہ غازیخان کی دورافتادہ بستی جہان خان کے رہائشی شبیرلاشاری اور اس کے کسی فیملی ممبرنے آج تک نہ تو پاسپورٹ بنوایا ہے اور نہ وہ تندرست و توانا ہیں۔ موٹرسائیکل تو ایک طرف ان کے پاس سائیکل بھی نہیں غلام شبیر لاشاری اور اس کی بہن خورشید بی بی کم قدوقامت یعنی پونے دو فٹ کے قد رکھتے ہیں اور دونوں کو گردوں کا مرض لاحق ہے بیوہ ماں کے ساتھ رہنے والے غلام شبیر نے بتایا کہ اس کی ماں کا بی آئی ایس پی کارڈ تھا اور یہ واحد امداد تھی جوکہ انہیں مل رہی تھی اب کسی نامعلوم وجوہات پر ان کا کارڈ ناکارہ ہوگیا ہے۔ اس نے بتایا کہ ان کانام بھی نکال دیا گیاہے۔ سابق چیف جسٹس آف پاکستان آصفسعید کھوسہ، سابق گورنرپنجاب لطیف کھوسہ کی آبائی بستی کے رہائشی غلام شبیرنے چیئرپرسن بی آئی ایس پی ثانیہ نشترسے استدعاکی ہے کہ ان کی ماں اور بہن کا نام بی آئی ایس پی میں دوبارہ شامل کیا جائے۔

فاقے

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...