چارسدہ، ڈی ایس پی ابازئی پر قاتلانہ حملے میں ملوث ملزمان گرفتار

چارسدہ، ڈی ایس پی ابازئی پر قاتلانہ حملے میں ملوث ملزمان گرفتار

  



چارسدہ (بیورو رپورٹ) ڈی ایس پی اعجاز خان ابازئی پر قاتلانہ حملے میں ملوث ملزمان گرفتار۔واردات میں استعمال ہونے والا اسلحہ بھی برآمد۔ملزمان نے 4 جنوری کو ڈی ایس پی اعجاز خان ابازئی پر ان کے حجرے میں قاتلانہ حملہ کیا تھا۔ملزمان سے تفیتش جاری ہے۔تفصیلات کے مطابق ایس پی افتخار شاہ نے ڈی ایس پیز فضل شیر خان،سعید خان اور ایس ایچ ا و طارق سعید کے ہمراہ ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 4 جنوری کو تھانہ تنگی کے حدودابازئی میں ڈی ایس پی اعجاز خان ابازئی پر ان کے حجرے میں فائرنگ ہوئی تھی جس میں ڈی ایس پی اعجاز خان ابازئی اور ان کے چچا زاد بھائی سید مالک ولد فضل رازق ساکنان ابازئی زخمی ہوئے تھے۔واقعہ کے بعد مجروحین کو ہسپتال منتقل کیا گیا۔واقعہ کے حوالے سے ڈی ایس پی اعجاز خان ولد یوسف علی نے باقاعدہ ایف آئی آر درج کرکے دو ملزمان نبیل ولد ناصر اور ناصر ولد نامعلوم کو نامزد کر دیا جو آپس میں باپ بیٹے ہیں۔واقعہ کے حوالے سے آئی جی ڈاکٹر ثناء اللہ اور ڈی آئی جی شیر اکبر خان نے نوٹس لیا اور ملزمان کی فوری گرفتاری یقینی بنانے کی ہدایت کی جس پر ڈی پی او چارسدہ عرفان اللہ خان نے ڈی ایس پی تنگی فضل شیر خان کی نگرانی میں ٹیم تشکیل دی گئی جس میں ایس ایچ او تھانہ تنگی طارق سعید اور دیگر ماہر پولیس افسران شامل تھے۔پولیس ٹیم نے جدید سائنسی خطوط پر کاروائی شروع کرکے ملزمان تک رسائی حاصل کی اور ایف آئی آر میں نامزد باپ بیٹے ناصر اور نبیل کو گرفتار کرلیا۔ مدغی مقدمہ ڈی ایس پی اعجاز خان نے وجہ عناد موبائل ایزی لوڈ بتایا اور اس حوالے سے تنگی پویس کو بتایا کہ ان کے چچا زاد بھائی جنید اور ملزم نبیل کے مابین ایزی لوڈ پر تکرار ہو رہی تھی کہ اس دوران میں حجرے سے جائے وقوعہ پہنچ گیا اور بیج بچاؤ کی کوشش کی مگر ملزمان نے اچانک فائرنگ شروع کردی جس سے مستعیث ڈی ایس پی اعجاز ابازئی زخمی ہو گئے جبکہ ان کے چچا زاد بھائی چاقو کی وار سے زخمی ہوئے۔پولیس ٹیم نے ملزمان سے تفتیش شروع کر دیا

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...