آرمی ایکٹ ترمیمی بل قائمہ کمیٹی دفاع سے متفقہ منظور،آج پارلیمنٹ میں پیش کیا جائیگا:پیپلز پارٹی کی ترامیم بھی جمع

آرمی ایکٹ ترمیمی بل قائمہ کمیٹی دفاع سے متفقہ منظور،آج پارلیمنٹ میں پیش کیا ...

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)  قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے مسلح افواج کے سربراہان کی مدت ملازمت میں توسیع کے حوالے سے تینوں ترمیمی بلوں کی متفقہ منظوری دیدی۔وزیر دفاع پرویز خٹک نے ترمیمی ایکٹ کی منظوری پر صحافیوں سے گفتگو میں انہیں مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ بل متفقہ طور پر منظور ہوا، اس حوالے سے حکومت اور اپوزیشن ایک پیج پر ہیں۔ انہوں نے کہاکہ غلط فہمیاں نہیں پیدا کرنی چاہیں،بل آج بروزمنگل قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے گا۔قائمہ کمیٹی دفاع کے اجلاس سے قبل پرویز خٹک کے زیر صدارت پارلیمنٹ چیمبر میں ایک اہم اجلاس ہوا، جس میں دفاعی کمیٹی کے چیئرمین امجد خان اور حکومتی ارکان نے شرکت کی۔ اجلاس میں آرمی ایکٹ ترمیمی بل کی دفاعی کمیٹی سے منظوری کی حکمت عملی طے کی گئی۔دوسری طر ف وفاقی وزیر قانون بیرسٹر فروغ نسیم کاکہناہے کہ آرمی ایکٹ ترمیمی بل کے حوالے سے رپورٹ بنا کر آ ج منگل کو پارلیمان میں پیش کریں گے،پاکستان کی سکیورٹی اور اداروں کے حوالے سے ترامیم پر سیاست نہیں ہونی چاہیے۔ میڈیا سے مزید گفتگوکرتے ہوئے فروغ نسیم نے کہاکہ اگر آرمی ایکٹ ترمیمی بل کے حوالے سے اپوزیشن جماعتوں میں سے کسی کا جائز پوائنٹ ہے تو اس کو لازمی سنیں گے۔وفاقی وزیر قانون نے کہاکہ مسلم لیگ (ن) کو بتایا کہ ہم سب کہ عزتیں ایک دوسرے کے ہاتھ میں ہیں،وزارت قانون تمام جماعتوں کی عزت کرتی ہے۔

آرمی ایکٹ میں ترامیم 

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)  پیپلز پارٹی نے آرمی ایکٹ کے مسودہ میں ترامیم جمع کروا دیں۔ترمیم میں تجویز دی گئی ہے کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے معاملہ پر وزیراعظم پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کو اعتماد میں لیں۔پیر کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رکن قومی اسمبلی شازیہ مری نے کہا ہے کہ ہم نے آرمی ایکٹ کے مسودہ میں اصلاحات کیلئے ترامیم جمع کرائیں ہیں۔ہم نے تجویز دی ہے کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے معاملہ پر وزیراعظم پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کو اعتماد میں لیں، ہماری ترامیم کے حوالے سے قومی اسمبلی کے فلور پر بات ہوسکتی ہے۔شازیہ مری نے کہا کہ حکومت کہتی ہے کہ پیپلز پارٹی کی ترامیم آئین کے آرٹیکل 243 اور 175 میں ترامیم سے متعلق ہیں، حکومت کا یہ دعویٰ غلط ہے، یہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع اور قواعد و ضوابط میں ترمیم کا معاملہ ہے۔

پیپلزپارٹی کی ترامیم 

مزید : صفحہ اول


loading...