قومی اسمبلی کااجلاس،آرمی ایکٹ 2020کثرت رائے سے منظور، اپوزیشن جماعتوں کی غیر مشروط حمایت

قومی اسمبلی کااجلاس،آرمی ایکٹ 2020کثرت رائے سے منظور، اپوزیشن جماعتوں کی غیر ...
 قومی اسمبلی کااجلاس،آرمی ایکٹ 2020کثرت رائے سے منظور، اپوزیشن جماعتوں کی غیر مشروط حمایت

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں  آرمی ایکٹ 2020کثرت رائے سے منظورکرلیاگیا۔اسپیکر اسد قیصر نے بل کی شق وار منظوری لی۔ اجلاس میں وزیراعظم عمران خان بھی شریک ہیں۔پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی نے بل کی غیر مشروط حمایت کی ہے۔

سپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت قومی اسمبلی کا اجلاس منگل کی دوپہر شروع ہوا جبکہ  وزیر اعظم عمران خان اجلاس شروع ہونے سے 15 منٹ پہلے ہی اسمبلی میں آ چکے تھے۔ 

قومی اسمبلی کے اس اجلاس میں اپوزیشن کے دیگر اہم رہنماؤں نے شرکت نہیں کی، جن میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور مسلم لیگ ن کے شاہد خاقان عباسی، احسن اقبال اور خواجہ سعد رفیق شامل ہیں۔اجلاس کے آغاز پر قائمہ کمیٹی برائے دفاع کے چیئرمین امجد علی خان نے فوج، بحریہ اور فضائیہ سے متعلق ترمیمی بل پیش کیے۔

رائے شماری کے نتیجے میں آرمی ایکٹ ترمیمی بل واضح اکثریت سے منظور کرلیا گیا، پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے بھی بل کی حمایت کی۔آرمی ایکٹ میں ترمیم سے متعلق اجلاس  میں وزیردفاع پرویز خٹک نےپاکستان پیپلز پارٹی سے درخواست کی کہ وہ ایکٹ میں ترمیم سے متعلق تجاویز واپس لے لیں۔جس پر پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما نوید قمر نے کہا کہ اتحاد برقرارکھنے اور خطے کی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنی تجاویز واپس لیتے ہیں۔  آرمی ایکٹ بل کی منظوری کے وقت جماعت اسلامی ، جمعیت علما ئے اسلام اور فاٹا سے تعلق رکھنے والے ارکان نے واک آوٹ کیا۔ تاہم کسی رکن اسمبلی نے بل کی مخالفت نہیں کی ہے۔

قومی اسمبلی کے اجلاس کا 17 نکاتی ایجنڈا اجلاس سےقبل جاری کردیا گیاتھا۔ایجنڈے کے مطابق قومی اسمبلی نے  آرمی ایکٹ ترمیمی بل 2020کی منظوری دے گی۔قومی اسمبلی میں سروسز چیفس سے متعلق قانون سازی کی الگ الگ منظوری دی گئی۔ایجنڈے میں آرمی ایکٹ1952،پاکستان ائیرفورس ایکٹ اورنیول آرڈیننس میں ترمیم کے بل شامل تھے جن کی منظوری دی گئی۔

حکومت اور حزب اختلاف کے درمیان طے شدہ ٹائم لائن کے مطابق یہ بل آج ہی سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع میں پیش ہوں گے، جہاں ان پر ووٹنگ کل متوقع ہے۔

پاکستان آرمی ایکٹ ترمیمی بل 2020 کے نام سے کی جانے والی قانون سازی کے مطابق تینوں مسلح افواج کے سربراہان اور چیئرمین آف جوائنٹ چیف آف سٹاف کمیٹی کی ریٹائرمنٹ کی زیادہ سے زیادہ عمر کی حد 64 برس ہوگی۔اس کے ساتھ مستقبل میں 60 برس کی عمر تک کی ملازمت کے بعد ان کے عہدے کی مدت میں توسیع کا استحقاق وزیراعظم کو حاصل ہوگا جبکہ حتمی منظوری صدر مملکت دیں گے۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ کی ہدایت پر آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع سے متعلق قانون سازی کرنے کے بعد یہ بل حکومت نے پیش کیا تھا۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے 29 نومبر 2019 کو ریٹائر ہونا تھا، تاہم وزیراعظم عمران خان نے ان کی ملازمت میں تین سال کی توسیع کر دی تھی جسے ریاض حنیف راہی نے سپریم کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ 

مذکورہ درخواست پر سماعت کے بعد سپریم کورٹ آف پاکستان کے ایک تین رکنی بینچ نے گذشہ ماہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں چھ ماہ کی توسیع کی اجازت دیتے ہوئے وفاقی حکومت کو اس سلسلے میں ضروری قانون سازی کی ہدایت کی تھی۔اس وقت کے چیف جسٹس آف پاکستان آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں بینچ نے اپنے فیصلے میں لکھا تھا کہ قانون سازی نہ ہونے کی صورت میں آرمی چیف قمر جاوید باجوہ اپنے عہدے سے سبکدوش تصور ہوں گے۔

مزید : Breaking News /اہم خبریں /قومی