موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کیخلاف حکومتی درخواست مسترد

 موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کیخلاف حکومتی درخواست مسترد

  



اسلام آباد(آئی این پی) سپریم کورٹ پاکستان نے موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کیخلاف حکومت کی درخواست مسترد کرتے ہوئے فریقین سے جواب طلب کرلیا ہے،ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے بتایا کہ نیشنل ہائی وے سیفٹی آرڈیننس کے مطابق موٹروے پر موٹرسائیکل نہیں چل سکتی۔جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ قانون کے مطابق پابندی کا نوٹیفکیشن وجوہات کیساتھ جاری کرنا لازم ہے، دنیا بھر کی موٹر ویز پر موٹرسائیکلز چلتی ہیں، اگر حکومت نے پابندی عائد کی ہے تو نوٹیفکیشن دکھائیں،جسٹس مشیر عالم کا کہنا تھا کہ حکومت کو اختیار ہے موٹروے پر موٹرسائیکلز کی آمد کو ریگولیٹ کرے۔تفصیلات کے مطابق جسٹس مشیر عالم کی سربراہی تین رکنی بنچ نے حکومت کی درخواست پرسماعت کی جس میں استدعا کی گئی تھی اسلام آباد ہائی کورٹ کا فیصلہ معطل کیا جائے۔بینچ کے رکن جسٹس منصورعلی شاہ نے استفسار کیا کہ کیا قانون میں موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے پر پابندی ہے؟ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامر رحمان نے بتایا کہ نیشنل ہائی وے سیفٹی آرڈیننس کے مطابق موٹروے پر موٹرسائیکل نہیں چل سکتی۔جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ قانون کے مطابق پابندی کا نوٹیفکیشن وجوہات کیساتھ جاری کرنا لازم ہے، دنیا بھر کی موٹر ویز پر موٹرسائیکلز چلتی ہیں، اگر حکومت نے پابندی عائد کی ہے تو نوٹیفکیشن دکھائیں۔حکومت کی طرف سے ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے بتایا کہ پابندی کیلئے باضابطہ نوٹیفکیشن جاری نہیں ہوا تاہم موٹروے کے انٹری پوائنٹس پر پابندی کے سائن بورڈ لگائے گئے ہیں۔عدالت کو آگاہ کیا گیا کہ موٹرسائیکل پر سیفٹی اور سیکیورٹی کی وجہ سے پابندی عائد کی گئی۔ چین، انڈونیشیا اور فلپائن میں موٹرسائیکلز موٹروے پر لانے پر پابندی ہے،جسٹس منصور علی شاہ نے کہا کہ ہائی وے پر موٹرسائیکل زیادہ خطرناک ہو سکتی ہے کیا وہاں پر حکومت کو شہریوں کی سیفٹی کی پرواہ نہیں وہاں تو سائیکلیں بھی چل رہی ہوتی ہیں۔جسٹس مشیر عالم کا کہنا تھا کہ حکومت کو اختیار ہے موٹروے پر موٹرسائیکلز کی آمد کو ریگولیٹ کرے۔درخواستگزار کے وکیل عامر رحمان نے بتایا کہ موٹرسائیکلز کو 2010 میں تین سال کیلئے اجازت دی گئی تھی، اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کے مطابق موٹروے پر چنگ چی بھی چل سکتی ہے۔عدالت نے فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت دس دن کیلئے ملتوی کر دی ہے۔ حکومت نے اسلام آباد کا مذکورہ فیصلہ مارچ2019 میں چلنج کیا تھا جس پر سماعت جاری ہے۔خیال رہے کہ دسمبر2018 میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے 600 یا اس سے زائد سی سی انجن رکھنے والی ہیوی بائیکس کو موٹروے پر چلانے کی اجازت دی تھی۔

 حکومتی درخواست مسترد 

مزید : صفحہ آخر