نوشہرہ ،اکوڑہ پولیس کا نووان پر تشدد ،ہاتھ پاؤں توڑ ڈالے

نوشہرہ ،اکوڑہ پولیس کا نووان پر تشدد ،ہاتھ پاؤں توڑ ڈالے

نوشہرہ(بیورورپورٹ)اکوڑہ خٹک پولیس کا تین نوجوانوں پر بدترین تشدد تینوں نوجوانوں کے ہاتھ پاؤں توڑ ڈالے تینوں نوجوان ہسپتال داخل والدین کا پولیس کے خلاف شدید احتجاج صوبائی حکومت پولیس تشدد کا نوٹس لے والدین کا مطالبہ اس سلسلے میں جمشیدسکنہ جہانگیرہ نے میڈیا کو بتایا کہ علی الصبح اکوڑہ خٹک پولیس اور جہانگیرہ چوکی کے اہلکاروں نے ہمارے گھروں پر بلاجواز چھاپہ مارکر ہم پر دھاوا بول دیا اور میرے بیٹوں شانزیب، خان محمد، شمشیرعلی اور مقدر پر بدترین تشدد شروع کی جس کے نتیجے میں تینوں شدید زخمی ہوگئے جبکہ دیگر رشتہ داروں کو بلاجواز گرفتار کرکے حوالات میں بند کردیا میرے بیٹے شانزیب کے دونوں پاؤں اور ایک ہاتھ ٹوٹ چکا ہے جبکہ شمشیر علی کا ایک ٹانگ ٹوٹ چکا ہے جبکہ پولیس نے ہم پر فائرنگ بھی کی جس سے ہم بال بال بچ گئے انہوں نے بتایا کہ صوبائی حکومت اور پولیس کے اعلیٰ حکام نوشہرہ پولیس کے بدترین تشدد کا نوٹس لے اور ہمیں انصاف فراہم کریں انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنے جرم کا پتہ نہیں کہ پولیس نے کیوں چھاپہ مارکر ہم پر بدترین تشدد کی انہوں نے کہا کہ میرے تینوں بیٹے شدید زخمی میں ہسپتال میں داخل ہوچکے ہیں اور میں بدترین تشدد کے خلاف عدالت کا دروزہ کھٹکٹاؤں گا اس سلسلے میں ایس ایچ او اکوڑہ خٹک نسیم خان نے بتایا کہ نوجوانوں پر کسی قسم کا تشدد نہیں ہوا چھاپے کے وقت مزکورہ افراد فرار ہونے کی کوشش میں دیوار پھلانگ کر گر گئے ہیں جس سے ان کی ٹانگوں میں موج آئی ہے پولیس نے گرفتار ہونے والے نوجوانوں پر کوئی تشدد نہیں کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر