جے آئی ٹی کی تشکیل کو 2ماہ مکمل ، حتمی رپورٹ کی تیاری کا عمل تیز

جے آئی ٹی کی تشکیل کو 2ماہ مکمل ، حتمی رپورٹ کی تیاری کا عمل تیز
جے آئی ٹی کی تشکیل کو 2ماہ مکمل ، حتمی رپورٹ کی تیاری کا عمل تیز

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ کے حکم پر 10جولائی کو حتمی رپورٹ جمع کرانے کی پابند جے آئی ٹی نے رپورٹ کی تیاری کا عمل تیز کر دیا ۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق پاناما لیکس پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی تشکیل کو آج دو ماہ مکمل گئے ، جے آئی ٹی نے حتمی رپورٹ 10جولائی کو سپریم کورٹ کے حوالے کرنی ہے جس کی تیاری کا عمل تیز کردیا گیا ہے۔قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ عدالت کی طرف سے دیا گیا 2ماہ کا وقت مکمل ہونے یعنی آج کے بعد جے آئی ٹی کسی شخص کو طلب کرنے کی مجاز نہیں ہو گی ۔

ذرائع کے مطابق ارکان نے شریف خاندان اور مختلف اداروں کے سربراہان کی طرف سے پیش کیے گئے ریکارڈ، گلف سٹیل ملز کی دستاویزات اور گواہوں کے بیانات پر غور کیا جبکہ مزید بیان ریکارڈ کرنے سے متعلق بھی مشاورت کی گئی۔جے آئی ٹی عدالت کی طرف سے اٹھائے گئے سوالوں کے جواب تلاش کرنے جدہ یا قطر نہیں گئی جبکہ برطانیہ سے بھی کوئی ریکارڈ حاصل نہیں کیا جاسکا۔

نجی ٹی وی کے مطابق جے آئی ٹی نے شریف خاندان کے بارے میں تفتیش کرنے والے افسروں کے بیان قلمبند کر لیے، اس سلسلے میں حدیبیہ پیپر ملز ریفرنس کے تفتیشی افسر بشارت شہزاد کا بیان قلمبند کیا گیا، بشارت شہزاد اب ایف آئی اے خیبر پختونخوا کے سربراہ ہیں۔

انہوں نے ہی عدالت لے جا کر اسحاق ڈار کا بیان ریکارڈ کرایا تھا، جے آئی ٹی نے ان سے حدیبیہ پیپر ملز کیس اور اسحاق ڈار کے بیان کا پس منظر بھی معلوم کیا، علاوہ ازیں حال ہی میں ایف آئی اے کے ریٹائر ہونے والے افسر جاوید علی شاہ کا بیان ریکارڈ کیا جبکہ جاوید علی شاہ رائے ونڈ جائیداد کے بارے میں تفتیش کرتے رہے ہیں۔

مزید :

قومی -