درجنوں اہم ترین دواﺅں نے انسانوں پر کام کرنا چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ سائنسدانوں نے انتہائی پریشان کن انکشاف کر دیا

درجنوں اہم ترین دواﺅں نے انسانوں پر کام کرنا چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ ...
درجنوں اہم ترین دواﺅں نے انسانوں پر کام کرنا چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ سائنسدانوں نے انتہائی پریشان کن انکشاف کر دیا

  


لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) حالیہ سالوں میں متعدد اینٹی بائیوٹکس انسانوں پر بے اثر ہو چکی ہیں۔ سائنسدانوں اسی مسئلے پر پریشان تھے لیکن اب اس سے بھی خوفناک انکشاف سامنے آ گیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق برطانوی طبی ماہرین نے انکشاف کیا ہے کہ اینٹی بائیوٹکس کے ساتھ ساتھ اب دیگر کئی بیماریوں کی ادویات نے کام چھوڑدیا ہے۔ ان بیماریوں میں پٹھوں اور اعضاءکے سکڑاﺅ کی بیماری فائبروسس اور نظام تنفس کی بیماری ایسپرجیلوسس شامل ہیں۔ پہلے جن ادویات سے ان بیماریوں کا کامیابی سے علاج کیا جا رہا تھااب وہ ادویات بے اثر ثابت ہونے لگی ہیں۔رپورٹ کے مطابق 54سالہ جان فلپس نامی برطانوی شخص ایسپرجیلوسس کی بیماری میں مبتلا ہے تاہم آج تک وہ اس بیماری کے باوجود طبی اعتبار سے بہترین زندگی گزار رہا تھا لیکن اب ادویات اس پر بے اثر ہونی شروع ہو گئی ہیں اور اس کی صحت دن بدن گرتی جا رہی ہے۔ اس کے پھیپھڑوں میں مولڈ کی ایک قسم جانے کی وجہ سے خوفناک قسم کی انفیکشن لاحق ہوئی ہے جو ان ادویات کی وجہ سے اب تک دبی رہی لیکن اب وہ بڑھتی جا رہی ہے اور کوئی دوا اس پر اثر نہیں کر رہی۔ اب تک وہ این ایچ ایس میں اپنی نوکری بھی کرتا آرہا تھا لیکن اب محض سیڑھیاں چڑھنے سے ہی اس کی حالت غیر ہو جاتی ہے۔ امپیرئیل کالج لندن کے فنگل ایپی ڈیمیولوجی کے پروفیسر میتھیو فشر کا کہنا ہے کہ ”یہ ایک انتہائی خوفناک صورتحال ہے جو اب تک کئی مریضوں میں سامنے آ چکی ہے۔ اب ان بیماریوں کا کوئی نیا توڑ سامنے نہ آیا تو دنیا میں صرف ایک ایسپر جیلوسس بیماری کے 3کروڑ سے زائد مریض خوفناک انجام سے دوچار ہوں گے۔“

مزید : تعلیم و صحت